طاقت کا نشہ، جہاد اور پانامہ لیکس: مجاہد حسین

0
  • 123
    Shares

پاک افغان بارڈر پر واقع البدر کیمپ سے فوجی تربیت حاصل کرنے کے بعد جب ہمیں کابل بھیجا گیا تو ایک رات خوست میں گزارنے کے بعد ہم ٹوٹی پھوٹی سڑکوں اور قدم قدم پر موجود فوجی چوکیوں سے گزرتے سیدھے چہارآسیاب پہنچے جو کہ کابل سے چند کلومیٹر کے فاصلے پر ایک پرسکون قصبہ تھا. گلبدین حکمت یار کا ہیڈکوارٹر بھی یہیں تھا۔ وہاں چند دن رہنے کے بعد ہمیں کابل بھیج دیا گیا جس پر قبضے کے لئے حکمت یار اور احمد شاہ مسعود کے جنگجوؤں کے درمیان لڑائی جاری تھی۔

کابل شہر کا جو حصہ ہمارے قبضے میں تھا وہ تباہی و ویرانی کی داستان سنا رہا تھا۔ فضاؤں میں بارود کی بو رچی ہوئی تھی اور فرشتہ اجل اپنے چاروں اور بکھرے شکار دیکھ کر رقص کناں تھا۔ اس علاقےمیں کوئی بھی مکان سلامت نہیں تھا اور ہر طرف اسلحہ بردار جنگجوؤں کا راج تھا۔ اس کے برعکس جو حصہ احمد شاہ مسعود کی عملداری میں تھا وہاں معمولات زندگی جاری تھے. ادھر کے رہائشی روزگار کے سلسلے میں دیگر قصبوں میں جانے کے لئے ہمارے زیرقبضہ علاقوں سے گزرا کرتے تھے. اکثریت لوکل بسوں میں سفر کرتی تھی لیکن موٹر سائیکل اور سائیکل پر بھی آمدورفت جاری رہتی تھی۔

ایک دن ہمارے کمانڈر کا دل چاہ رہا تھا کہ وہ چہارآسیاب کا چکر لگا آئے۔ چونکہ وہاں ہمارے پاس سواری کوئی نہیں تھی اس لئے مجھے ساتھ لے کر وہ سڑک کے کنارے کھڑا ہو گیا۔ تھوڑی دیر بعد ایک افغانی اپنی موٹر سائیکل سے گزرا تو کمانڈر نے اسے گن پوائنٹ پہ روک لیا. اسے پشتو میں کچھ کہا اور پھر ہم دونوں اس کے پیچھے بیٹھ کر اپنے علاقے میں واپس آ گئے۔ کمانڈر نے اس شخص کے ہاتھ میں بیلچہ تھما کر حکم دیا کہ اس کی واپسی تک وہ پتھریلی زمین کھودتا  رہے اور  خود اس کی موٹرسائکل پر چہارآسیاب روانہ ہو گیا۔ جب شام کو اس کی واپسی ہوئی تو وہ شخص خوف اور تھکن سے بے حال ہو چکا تھا۔  اسے کچھ علم نہیں تھا کہ اس کا مستقبل کیا ہے۔ کیا اسے گولی مار دی جائے گی، قید خانے میں ڈال دیا جائے گا یا پھر مزید کئی ہفتے وہ زمین کھودنے پر معمور رہے گا۔ کمانڈر ابھی اسے جانے کی اجازت دینے پر تیار نہیں تھا۔ تاہم ہماری منت سماجت پر اسے اپنی سواری سمیت جانے کی اجازت مل گئی۔

وہاں موجود جنگجو طاقت کے اس لامحدود نشے میں مست تھے۔ یہ ایسا مدہوش کر دینے والا مزا تھا جسے صرف وہی آدمی سمجھ سکتا ہے جس نے جنگ زدہ علاقے میں وقت گزارا ہو۔ اس رزم گاہ میں ایسے بہت سے لوگ ملے جو طویل عرصے سے وہاں موجود تھے۔ ان سے گفتگو کے دوران اندازہ ہوا کہ اگرچہ وہ خود یہی سمجھتے ہیں کہ جذبہ جہاد انہیں وہاں سے نہیں جانے دیتا لیکن حقیقت میں یہ طاقت کا مزا تھا جس کی وجہ سے وہ ایسی خطرناک جگہ میں موجود تھے جہاں زندگی مختصر اور موت ارزاں تھی۔

اس دوران یہ جنگجو جب بھی اپنے گھر گئے، بہت بدمزہ ہو کر واپس آئے کیونکہ پاکستانی حدود میں داخل ہوتے ہی ان کی تمام تر طاقت چھن جاتی تھی۔ وہ ایک دم سے ایسے علاقے میں پہنچ جاتے تھے جہاں ٹریفک پولیس کا ایک عام اہلکار ان کا چالان کر سکتا تھا اور ایک معمولی کلرک بھی انہیں نخوت بھرے لہجے میں جھڑک دیتا تھا۔ اسی لئے وہ چند ہی روز میں اکتا کر واپس محاذ جنگ پر پہنچ جاتے جہاں طاقت کا نشہ پورا کرنے کے تمام لوازمات مہیا تھے۔ کابل کی اجل زدہ سرزمین پر قدم دھرتے ہی تہذیب کی وہ کمزور پرت اتر جاتی تھی جو ایک مہذب دنیا میں انسانوں کو حدود میں مقید کئے رکھتی ہے۔

کابل کا جو علاقہ ہماری دسترس میں تھا، وہ پاکستان کے ایک چھوٹے سے دیہات کے برابر ہو گا۔ جب اتنی معمولی جگہ پر طاقت کا اختیار انسان کو موت کے خوف سے آزاد کردیتا ہے تو ان حکمرانوں کے ساتھ کیا ہوتا ہو گا جو کروڑوں لوگ اور لاکھوں مربع میل کے علاقے پر حکومت کرتے ہیں؟

انسانی تاریخ گواہ ہے کہ طاقت کی اس چاہ میں بارہا اپنے بھائیوں، بہنوں اور حتی کہ اولاد کو بھی قتل کیا گیا۔ جس طرح ہیروئین کا نشئی اپنی طلب پوری کرنے کے لئے ہر اخلاقی حد عبور کر سکتا ہے اسی طرح اقتدار کی چاہ سے مغلوب ایک بظاہر مہذب نظر آنے والے شخص کو بھی غاروں کے دور والے جنگلی انسان میں تبدیل ہوتے دیر نہیں لگتی۔

پاکستان میں پانامہ لیکس سے پیدا ہونے والی صورتحال کو اس نکتہ نظر سے دیکھا جائے تو ساری گتھیاں سلجھ جاتی ہے۔ شاہی خاندان مسلسل جھوٹ بول کر نہ صرف اپنے عوام کے سامنے رسوا ہو رہا ہے بلکہ پوری دنیا میں یہ ایک مذاق بن کر رہ گئے ہیں۔ پچھلے ایک سال کے دوران جس طرح پاکستانی قوم نے ان کے بدلتے بیانات، کہہ مکرنیاں، غلط بیانیاں اور جھوٹے وعدے دیکھے ہیں اس کے بعد شاہی خاندان کا وقار پوری طرح تباہ ہو چکا ہے لیکن ان کا فریب زدہ ذہن آج بھی انہیں یقین دلا رہا ہے کہ وہ اس بحران سے نکل آئیں گے۔

شریف خاندان کا معاملہ اس لئے زیادہ سنگین ہے کہ یہاں طاقت کے ساتھ ساتھ دولت کا نشہ بھی شامل ہو گیا ہے اور اس دوآتشہ طلب نے ایک قیامت برپا کی ہوئی ہے۔ ان کی اپنی جماعت کو شدید سیاسی نقصان ہو رہا ہے، حکومتی مشینری جام ہو چکی ہے، معیشت پر کنٹرول کمزور پڑ گیا ہے لیکن وہ رخصت ہونے سے انکاری ہیں۔ یہ بات یقینی ہے کہ جب تک مسلم لیگ نون کے اندر سے بغاوت کی صدائیں نہیں اٹھیں گی، یہ شاہی خاندان ہوش میں نہیں آئے گا۔ گہرے نشے میں مخمور انسان حقائق کی دنیا سے کٹ جاتا ہے۔ اسے صرف اپنے قریبی لوگ ہی جھنجھوڑ کر ہوش میں لا سکتے ہیں۔

ان کا رخصت ہونا تو نوشتہ دیوار ہے، دیکھنا فقط یہ ہے کہ ملک کو اور مسلم لیگ نون کو کتنا نقصان پہنچنے کے بعد ان کے رفقا جرات اظہار پر تیار ہوں گے اور احتجاج کی صدا بلند کر کے اس بحران کا خاتمہ کریں گے۔

About Author

مجاہد حسین خٹک کو سچائی کی تلاش بیقرار رکھتی ہے۔ تاریخ اور سماجی علوم میں خصوصی دلچسپی رکھتے ہیں۔ ان کا خیال ہے کہ اعتدال کا تعلق رویوں سے ہے، فکر کی دنیا میں اہمیت صرف تخلیقیت کی ہے۔ اسی لئے ان کی کوشش یہ ہوتی ہے کہ مختلف موضوعات کا جائزہ لیتے ہوئے سوچ کے نئے زاوئیے تلاش کئے جائیں۔

Leave a Reply

Leave A Reply

%d bloggers like this: