بولو کہ صبح حشر کی تمہید کچھ تو ہو: ظفراللہ خان

1

آپ میں سے ہر کسی نے نئی انڈین فلم “ہاف گرل فرینڈ” ضرور دیکھی ہوگی. اس فلم کا مرکزی کردار کون ہے اور کہانی کیا ہے. سردست مجھے اس فلم کے ایک ایسے حصہ کو پیش کرنا مطلوب ہے جس میں بحیثیت قوم ہمارےسوچنے کے لئے بہت کچھ موجود ہے. اس کہانی کے مرکزی کردار کا اپنی قومی زبان ہندی کے ساتھ محبت دیکھنے سے قابل رکھتی ہے.وہ انٹرویوز میں بھی ہندی کا سہارا لیتاہے اور جب بل گیٹس کے سامنے تقریر کرتاہے تب بھی ہندی کو ترجیح دیتاہے.

کہانی کا اگلا پڑاؤ کیا ہے قارئین جاننے کی زحمت خود اٹھائیں تو وہ مجھ سے بہتر اس کی تفہیم حاصل کر پائیں گے.
پچھلے دنوں ہمارے ایک دوست نے چترالی زبان کو درپیش مسائل کےمتعلق ایک نشست میں مدعو کیا اور اپنی عادت کے برخلاف مجھے شریک ہونا پڑا. عمومًا میں اردو سے ہٹ کے کسی دوسری زبان کے متعلق اتنا حساس نہیں رہاہوں . اس لئے اس طرح کے پروگرامات میں شرکت سے ہمشہ معذوری ظاہر کی ہےمگر اس نشست میں جن مسائل کی نشاندہی کی گئی،  اس کے بعد یہ میرے لئے یک نہ شد دو شد والا معمہ بن گیا ہے. وہاں مقررین کچھ اور سنا رہے تھے اور میری سوچوں کی ناؤ دوسری سمت میں سفر کررہی تھی کہ اردو زبان کا مستقبل کیا ہوگا؟ اردو زبان کے ساتھ یہ سوتیلے پن کا  سلوک کب تک روا رکھا جائے گا!!!یہ اور اس طرح کے کئی سوالات ذھن پر ہتھوڑے بن کر برس رہے تھے.

راقم الحروف نے اس مسئلہ پر مسلسل غور کیا ہے کہ اردو کے فروغ کے لئے بہت سے سرکاری، نیم سرکاری اور پرائیوٹ ادارے قائم ہونے کے باوجود اردو کو اس کا جائز مقام کیوں نہیں دیا جارہا اور کیوں قائداعظم کے ارشاد کو مسلسل نظر انداز کیا جارہاہے؟  اردو کو نظر انداز کرنا محض ادبی مسئلہ نہیں ہے بلکہ بنیادی قومی مسئلہ ہے. اردو کو نظرانداز کرنا دستور پاکستان کی خلاف ورزی ہے.بل بحیثیت قوم ہم نے پاکستان کے جواز کی بنیادوں کو کھوکھلا کیا ہے.آیئے مل کر غور کرتے ہیں کہ اردو کو کیوں نظر انداز کیا جارہا ہے. .!!!

یہ دراصل پاکستان میں طبقاتی امتیاز اور کش مکش کو قائم رکھنے کی گہری سازش ہے. میرے نزدیک پاکستان اس وقت تک صحیح معنوں میں آذاد، خودمختار، ترقی یافتہ اور بہتر مستقبل کی طرف پیش قدمی کرنے والا ملک نہیں بن سکتا،  جب تک یہاں جاگیردارانہ نظام قائم ہے. مزید زبان کی بنیاد پرحاکم و محکوم کی تفریق جاری ہے. میں نے کہیں پڑھا تھا کہ کسی باہر سے آئے ہوئے اسکالر نے کراچی میں اپنی تقریر میں یہ کہہ کر ہمارے منہ پر تھپڑ مارا تھا کہ”پاکستان آنے سے پہلے میں سمجھتاتھا کہ اردو میرتقی میر کی دردمند زبان ہے، سودا کی پرشکوہ زبان ہے، غالب کی سوچتی ہوئی زبان ہےاور اقبال کی آفاقی اقدار کی ترجمان زبان ہے. مگر پاکستان آکر معلوم ہوابیروں، خانساموں، گھریلو ملازموں اور ذیادہ سے ذیادہ کلرکوں کی زبان ہے جبکہ انگریزی پاکستانی حکمرانوں کی زبان ہے. اس صورتحال کو دیکھتےہوئے یوسفی صاحب نے کیا خوب کہا ہے کہ ہم وہ قوم ہیں جو صحیح اردو پر غلط انگریزی کو ترجیح دیتے ہیں..میرے نزدیک اردو کو تعلیمی اور سرکاری زبان بنانے کا زیادہ سے ذیادہ”نقصان “یہ ہوگا کہ  طلباء اور عام دفتری ملازموں کی تخلیقی صلاحیت جاگ اٹھے گی.  ہمارے دیسی حکمرانوں کی فوقیت جو صرف انگریزی پر قائم ہے جس میں کوئی فکری پہلو بھی نہیں ختم ہوجائے گی.  یہ نقصان بھلا دیسی حکمران کیسے برداشت کرسکتے ہیں؟

ہم رو رہے ہیں کہ کیوں ہمارے ہاں بڑے ادیب جنم نہیں لے رہے. یہ سب بعد کی باتیں ہیں پہلے ہمیں اپنی زبان کی بقاءکی جنگ لڑنی چاھئے. سوچتاہوں کہ صوبہ کے پی کے میں انگریزی نظام تعلیم ہی ہمارا منہ چڑانے کے لئے کافی ہے کجا کہ ہم کسی وفاقی حکومت پر انگلی اٹھائیں. میرے خیال میں یہ معرکہ صوبہ کے پی کے میں ہی بپا کرنا ہوگا.  یہاں یہ معرکہ سر کریں گے تو یقین مانیں پھر پورے ملک میں ہم اردو کو اس کا جائز دستوری مقام دلانے میں کامیاب ہوسکتے ہیں.

آج برقیاتی وسائل ابلاغ سے یہ بات مسلسل دہرائی جارہی ہے کہ آذاد عدلیہ، منتخب ایوان دستور ساز، اور آذاد صحافت کے بغیر جمہوریت قائم نہیں ہوسکتی اور نعرے بازی کے اس دور میں یہ بات سیاست داں بھی بھول گئے ہیں کہ اپنی زبان کے بغیر جمہوریت گونگی رہی گی. یہ جمہوریت بہروں کے انجمن میں گونگی مقّررہ کی طرح ہوگی تو صاحبو! کیا آپ کو یہ صورتحال قبول ہے؟
بولو کہ صبح حشر کی تمہید کچھ تو ہو

About Author

Leave a Reply

1 تبصرہ

Leave A Reply

%d bloggers like this: