استاد دامنؔ : پنجابی شاعری کا ایک ورثہ —- افضل رضویؔ

0

یادِ رفتگاں: استاد چراغ دین دامنؔ

؎ لالی اکھیاں دی پئی دس دی اے
روے توسیں وی او، روے اسیں وی آں

پنجابی برِ صغیر پاک وہند کی قدیم زبان ہے جس کا قدیم ادب تاریخ کے اندھیروں میں گم ہے۔ اس کی قدیم علمی حیثیت کے بارے میں بھی چنداں معلومات میسر نہیں تاہم چھے ہزار سال پہلے جب آریاؤں نے ہندوستان پر حملہ کیا تو پہلی مرتبہ اس کا کسی غیرملکی زبان سے ملاپ ہوااورچونکہ آریا ایک وسیع علمی زبان کے مالک تھے اس لیے انہوں نے مقامی زبان پنجابی کو بھی متاثر کیا اور اس پر گہرے اثرات مرتب کیے۔ دوسری مرتبہ یہ زبان اس وقت بیرونی زبان سے متاثر ہوئی جب ۶۵۳ ق۔ م میں سکندرِ اعظم عراق و ایران کو فتح کرتا ہوا برِصغیر کے علاقے سپت سندھو یعنی پنجاب میں داخل ہوا۔ ۱۱۷؁ء میں محمد بن قاسم سندھ کو فتح کرنے کے بعد ملتان تک بڑھتا چلا آیا یعنی سندھ سے گزر کر اس نے پنجاب کی سر زمین پرقدم رکھے تو عربوں کی تہذیب و ثقافت اور عربی زبان و ادب کے گہرے نقوش پنجابی زبان پر ثبت ہوئے۔ ۱۰۰۱ ؁ء سے ۴۲۰۱ ؁ء تک غزنی کے سلطان، محمود غزنوی نے ہندوستان پر (۷۱) سترہ حملے کیے۔ اس دوران وہ پنجاب سے ہوتا ہوا وسطِ ہند تک پہنچا۔ سلطان ایک علم دوست حکمران تھا لہذا جب وہ اس علاقے پر حملہ آور ہوا تو اپنے ساتھ فارسی کے عالم اور شاعر بھی لایا، یوں فارسی اور پنجابی ادب کا میل ملاپ ہوا اورجس کے نتیجے میں پنجابی ادب کا ایک شہ پارہ “بول فریدی” کے عنوان سے پنجابی کی علمی محفلوں کو گرمانے لگا۔ ملاحظہ کیجیے ایک مثال:

Image

استاد دامن کی بیٹھک، اندرون ٹکسالی گیٹ، لاہور

فریدا ایسا ہوئے رہیو جیسا ککھ مسیت
پیراں ہیٹھ لتاڑیے اوکدے نہ چھوڑے پریت

1500ءسے1600ء کے دور میں کا فیاں شاہ حسین اور مرزا صاحباں جیسے شہ پاروں نے پنجابی زبان کو چار چاند لگادیئے۔ 1700ء سے 1800ء کے وسطی دور میں پنجابی زبا ن وادب نے اپنی وسعت کے اعتبار سے وہ کمال حاصل کیا کہ جس کی بدولت یہ زبان دنیا کی بیشتر زبانوں کے مقابل آ کھڑی ہوئی۔ ابیاتِ سلطان باہو، سی حرفیاں علی حیدر،کافیاں بلھے شاہ اور ہیر وارث شاہ جیسے شاہکار تخلیق ہوئے۔

1800ء سے1900ء کے دور میں عیسائی مشنریوں نے اس سے عیسائیت کی تبلیغ کا کام لیا، چنانچہ اس کے ردِ عمل کے طور پر دوہڑے – ہاشم شاہ، احسن القصص – غلام رسول، سیف الملوک – میاں محمد بخش جیسی تخلیقات منصہ شہود پر آئیں۔ یہ دور پنجابی کے لیے بہت مفید ثابت ہوا کیونکہ عیسائی تحریک کے ردِ عمل کے طور پر تخلیق پانے والا ادب زبان زدِ خاص و عام ہوا جس سے اس زبان کی ترویج و اشاعت میں بہت مدد ملی۔ بیسویں صدی کے وسط میں جہاں ہمارے ہاں دوسری زبانوں کے شعری مزاج میں تبدیلیاں وقوع پذیر ہوئیں وہاں یہ زبان بھی نت نئے تجربات سے متعارف ہوئیں۔ حکیم شیر محمد، محمد منشا سلیمی، اختر حسین اخترؔ اور استاد دامنؔ جیسے شاعروں نے پنجابی میں نئی نئی جدت طرازیاں کرکے اسے بامِ عروج تک پہنچایا۔ موجودہ دور میں شریف کنجاہی، منیر نیازی، اعزاز احمد آذر، فخر زمان، عارف عبدالمتین اور انور مسعود پنجابی شاعری کے بڑے نام ہیں۔ عارف عبدالمتین کی ایک نعت کا شعر مالاحظہ ہو:

Imageزمین وچ عاجزی تیری اے، تے امبراں وچ وقار تیرا
جہاں دی دکھ اے دین تیری، سنگھار اوہدا سنگھار تیرا

جیسا کہ میں نے پہلے عرض کیا ہے کہ بیسویں صدی کے وسط میں پنجابی شاعری کو جن شعراء نے عوامی مقبولیت دلائی ان میں ایک بڑا نام چراغ دین بمتخلص دامن کا ہے۔ جنہیں لوگ استاد دامن کے نام سے جانتے ہیں۔ وہ 9 فروری 1911ء کو چوک متی لوہاری گیٹ لاہور میں پیدا ہوئے۔ ان کے والد کا نام میراں بخش اور والدہ کا کریم بی بی تھا۔ والد درزی کا کام کرتے تھے، جب کہ ان کے بڑے بھائی لوکو شیڈ ورکشاپ کے درزی خانے میں ملازمت کرتے تھے۔ اس حوالے سے حضرت علامہ اقبال ؒ اور ان میں یہ قدر مشترک تھی۔ ماں باپ چاہتے تھے کہ بیٹا جلد از جلد کام سیکھ کر آمدنی کا ذریعہ بنے؛ جب کہ بھائی چاہتے تھے کہ چراغ دین پڑھ لکھ کر خاندان کا نام روشن کرےلیکن بھائی کی زندگی نے ان سے وفا نہ کی اور انہیں داغِ مفارقت دے کر جہانِ ابد کو سدھار گئے اور یوں چراغ دین کی تعلیم ادھوری رہ گئی۔ کم تعلیم کی وجہ سے کسی بھی سرکاری محکمے میں ملازمت حاصل کرنے میں ناکامی کے بعد باغبانپورہ لاہور میں درزی کی دکان کھول لی۔ یہیں سے کاروبار ِ زندگی بھی چلنے لگا اور مزاقِ شعر و شاعری بھی پروان چڑھنے لگا۔ دامن اصلاح معروف شاعر ہمدم سے لیا کرتے تھے، اسی لیے ابتدا میں اپنے استاد کی نسبت سے دمدم تخلص کیا اور بعد میں دامن اختیار کیا۔ بیسویں صدی کے نصف تک پہنچتے پہنچتے دامن نے شہرت کے ایسے زینے پر قدم رکھا جہاں وہ اپنے انتقال کے دو عشرے گزرجانے کے بعد بھی اسی سج دھج کے ساتھ کھڑا ہے، بلکہ اگر یوں کہا جائے کہ پہلے سے بھی زیادہ بلند مقام پر ہے تو یہ غلط نہ ہو گا۔

دامن پنجابی شاعر ہونے کی وجہ سے سکھوں اور ہندوؤں میں بھی برابر مقبول تھے۔ انہیں ترقی پسند شعرا میں اس لیے شمار کیا جاتا ہے کیونکہ انہوں نے 1949 میں منعقدہ ایک جلسے میں نظم ”انقلاب“ پڑھی جس کی صدارت شاعر ِ انقلاب فیض احمد فیض ؔ نے کی۔

استاد دامن دوسروں کے غیض و غضب سے بچنے کا نسخہ بتاتے ہوئے کہتے ہیں:

دامن چانا ایں جے تینوں نہ ضرب لگے
جاہلاں وچ دانائی تقسیم نہ کر

ایک جگہ وہ شاعر کی خصوصیت بتاتے ہوئے کہتے ہیں کہ اصل شاعر وہ ہوتا ہے جو زہر کو زہر اور کند کو کند کہے یعنی درست بات کو درست اور غلط کو ہمیشہ غلط ہی کہے۔

میرے خیال اندر اوہ شاعر شاعر ہوندا
کھنڈ نوں کھنڈ زہر نوں زہر آکھے

جو کجھ ہوندا اے ہووے نہ ڈرے ہرگز
رحم نوں رحم تے قہر نوں قہر آکھے

بھاویں ہستی دی بستی برباد ہووے
جنگل نوں جنگل تے شہر نوں شہر آکھے

دامن دکھاں دے بحر وچ جاوے رڑھدا
پر ندی نوں ندی تے نہر نوں نہر آکھے

دامن کو اس بات کا بھی بخوبی علم تھا کہ شاطر لوگ ہمہ وقت روٹی کی بات کرتے ہیں اور وہ لوگ جو بے چارے سادہ لوح ہیں، انہیں روٹی کا چکر دے کر اپنے پیچھے لگا لیتے ہیں اور پھر اپنا مقصد پورا ہوتے ہی ان سے آنکھیں پھیر لیتے ہیں، کہتے ہیں:

شاعر اچے خیالاں وچ رہن والے
ڈگن عرش اتوں کدی طور اتوں
سبھ نوں ویکھدے نیں، ایہناں نوں کون ویکھے
روشن اکھاں نے رب دے نور اتوں

چنگا شعر جے ہووے تے توڑیاں نیں
فیض پائے نیں فیض گنجور اتوں
دامن مسئلہ خوراک تے بحث کردے
روٹی کھاندے نیں آپ تندور اتوں

استاد دامن نے غربت کی وجہ سے توٹتے رشتے ناطوں کو بڑی بے باکی سے شعری آہنگ میں باندھا ہے اور اس کی وضاحت نہایت خوبصورت مثال دے کر کی ہے کہ جس درخت کی شاخ پر کوئی پھل نہ لگے اس پر پرندے بیٹھنا پسند نہیں کرتے۔ پس جو غریب ہو اس کے دوست احباب بھی اس کا ساتھ چھوڑ جاتے ہیں۔

Imageجدوں اپنی جیب توں پھانک ہوئیے
کدوں یاریاں گوڑھیاں رہندیاں نیں
جنہاں ٹاہنیاں نال نہ پھل لگن
اونہاں اتے نہ بلبلاں بہندیاں نیں
کچھ مزید اشعار بھی ملاحظہ ہوں۔
مالداراں نوں دکھ ودھیک ہوندے
اینی گل نہ خلکتاں ویہندیاں نیں
جیہڑی بیری نوں لگدے بیر بُہتے
اِٹاں اوسے نوں بہتیاں پیندیاں نیں

اکھاں کھلدیاں تے ہوشاں آؤندیاں نیں
جدوں آن سر اتے بھیڑاں پیندیاں نیں
گریاں اودوں بداماں وچوں باہر آون
جدوں اونہاں اتے سٹاں پیندیاں نیں

جدوں پانی دریاواں وچوں مک جاندے
کدوں مچھیاں جیوندیاں رہندیاں نیں
جدوں کسے مکان نوں کیر لگے
کندھاں اپنے آپ ای ڈیہندیاں نیں

معاشرے کے ناروا ریوں پر اظہارِ خیال کرتے ہوئے کہتے ہیں:

بندہ ڈگدا ڈھیندا اٹھدا اے، ڈگدیاں ڈیہندیاں ٹرن دا ڈھنگ آؤندا
شیشہ ٹٹدا بجھدا جڑ دا اے، ایدوں اِٹ آؤندی اوہدوں سنگ آؤندا
اوہدوں زندگی دا مزہ آؤندا اے، فاقے مستیاں تے جدوں رنگ آؤندا
اوہدوں جنگلاں دے ول مونہہ کرنا دل وستیاں توں جدوں تنگ آؤندا
یار یار کول آؤندا اے تنگ ویلے جیویں شمع دے اتے پتنگ آؤندا
بازی تنگ دستی دی کھلری اے، جیہڑا یار آؤندا بد رنگ آؤندا
بندہ چاہے تے کیہہ نہیں کر سکدا، منیا وقت وی تنگ توں تنگ آؤندا
رانجھا تخت ہزاریوں ٹرے تے سہی،پیراں ہیٹھ سیالاں دا جھنگ آؤندا

استاد چراغ دین دامن، اردو معروف شاعر نظیر اکبرآبادی کی طرح پنجابی کے عوامی شاعر تھے، یہی وجہ ہے کہ معاشرے کے عام مضامین ان کی شاعری میں دیکھے جاسکتے ہیں۔ پاکستانی معاشرہ کل بھی ٹیکسوں سے پریشان تھا اور موجودہ دور میں تو اس نے ہر شہری کا جینا دو بھر کر دیا ہے۔ استاد دامن نے گویا آج کے دور کی ترجمانی کرتے ہوئے درج ذیل اشعار کہے:

چاندی سونے تے ہیرے دی کان تے ٹیکس
بیٹھک، ڈیوڑھی، چوبارے، ڈھلان تے ٹیکس
بیٹھے تھڑے تے، نالے پہلوان تے ٹیکس
عقل مند تے،نالے نادان تے ٹیکس
پانی پین تے،روٹی کھان تے ٹیکس
انسان تے ٹیکس، حیوان تے ٹیکس
آئے گئے مسافر، مہمان تے ٹیکس
ایس واسطے بولدا نہیں دامنؔ
متاں لگ جائے میری زبان تے ٹیکس

3دسمبر 1984 کو پنجابی کا یہ انقلابی شاعر اپنے لازوال اشعار آئندہ آنے والی نسل کیلئے چھوڑ کر اس جہاں فانی سے جہانِ ابد کو سدھار گیا۔

(Visited 1 times, 1 visits today)

Leave a Reply

Leave A Reply


Parse error: syntax error, unexpected '<', expecting identifier (T_STRING) or variable (T_VARIABLE) or '{' or '$' in /home/daanishp/public_html/wp-content/themes/daanishv2/footer.php on line 20