سترہ روپے کلو : ٹماٹر 🍎🍎🍎 — شاذیہ ظفر

0

رات مشیر خزانہ نے ھم عوام کو اتنی دل خوش کن اطلاع فراھم کی کہ ھماری تو پوری رات ھی ان سہانے سپنوں میں بسر ھوگئی۔۔ اسی خوشی میں ڈوبے سوتے جاگتے کیا کیا خواب نہ دیکھے ھم نے اور موقعہ پاتے ھی آج سویرے ناشتہ کی ٹیبل پر یہ فرمائش صاحب بہادر کے کانوں میں انڈیل دی۔۔۔ ” اجی سنتے ھیں۔۔ ھمیں سبزی منڈی جانا ھے” ھم نے لہجے میں بھرپور اشتیاق سموتے ھوئے بڑے لہک اور چہک کر ” اجی” کو مخاطب کیا۔۔۔۔ادھر سے حسب توقع حیران ھوتے ھوئے استفسار ھوا۔۔۔خیریت؟ یہ آج کیا ھوگیا آپ کو۔۔۔سبزی منڈی بھی کوئی جانے کی جگہ ھے۔۔۔اور خواتین کے جانے کی تو بالکل بھی نہیں۔۔۔۔ کیا چاھیئے؟ سبزی والا آتا تو ھےاس سے لے لیجیئے۔۔۔۔

ارمانوں پر اوس پڑتے دیکھ ھم نے گلا کھنکھار کر دوبارہ عرضی ڈالی۔۔۔۔کیوں بھئی؟ خواتین کے جانے کی کیوں ممانعت ھونے لگی وھاں؟ پورا ملک جوق در جوق “ٹکٹ کٹاؤ لین بناؤ” کی عملی تفسیر بنا ھوا ھے۔۔۔ چار دانگ عالم میں کراچی کی سبزی منڈی کے چرچے ھیں۔۔ کیا آپ کو خبر نہیں کہ وھاں ٹماٹر سترہ روپے کلو بک رھے ھیں۔۔۔ ھمیں تو مشیر خزانہ کی جانب سے اس خوشخبری کو سن کے ایسی راحت ملی ھے کہ بیان سے باھر ھے۔۔ اب صحیح لطف آئے گا ناں مٹن کڑاھی بنانے کا۔۔جب سے ٹماٹروں کی قیمتیں آسمان کو پہنچیں ھیں ھم نے چن چن کے وہ کھانے بنانے شروع کر دیئے ھیں جن میں ٹماٹر کا استعمال نہیں ھوتا۔۔۔ تبھی تو کل رات بریانی کی جگہ پلاؤ بنایا تھا۔۔۔ لگے ھاتھوں اپنے سگھڑاپے کا تذکرہ بھی گوش گذار کرتے ھوئے ھم نے بات بڑھائی۔۔مگر خیر اب اور سمجھوتہ نہیں۔۔۔ مشیر خزانہ نے بتا دیا ھے کہ ھر خزاں کے بعد بہار آتی ھی ھے اور ھر شبِ سیاہ کا سویرا ھو کر ھی رھتا ھے۔۔جب سے انکے مبارک منہ سے یہ سننا ھے کہ مہنگائی کے بادل چھٹ گئے ھیں ھماری کیفیت تو ” کفتان خان کے جلسے میں نچنے نوں جی کر دا ” ٹائپ ھورھی ھے۔۔۔ کیا حرج ھے کہ آپ ھمیں سبزی منڈی کی سیر کروا ھی دیں آج۔۔۔

اس لمبی چوڑی فرمائشی تقریر کے بعد ھمیں قوی توقعات وابستہ تھیں کہ صاحب بہادر کا دل ضرور پسیجے گا اور وہ بے دلی سے ھی سہی مگر ھماری اس معصوم خواھش کا پاس ضرور رکھیں گے۔۔۔ یہی سوچتے ھوئے خیالوں ھی خیالوں میں ھم نے خود کو سبزی منڈی میں کھڑا پایا۔۔۔کیا دیکھتے ھیں کہ ٹماٹر کے ٹرکوں کی قطاریں سبزی منڈی کے باھر موجود ھیں۔۔جن میں سے لال سرخ ٹماٹروں کی پیٹیاں جھانک ھماری آنکھوں کو ٹھنڈک فراھم کر رھی ھیں۔۔۔ٹماٹروں پر سے نظریں ھٹائیں تو سیدھی پیاز پر جا کر رکیں کہ جو ” قدموں میں تیرے جینا مرنا” پکارتی ھوئی ھمارے قدموں میں لوٹیں لگانے کو بیقرار تھی۔۔۔ اففف خداوندا کیسی کایا پلٹ ھوگئی ھے ھم نے سوچا جب سبزی منڈی میں ٹماٹر اور پیاز اتنے بے وقعت ھو رھے ھیں تو پھر باقی سبزیاں یقیناً مفت ھی بٹ رھی ھونگی۔۔۔ کیا حسین منظر ھوگا وھاں کہ جب دکاندار ھمیں سبزی مفت دینے پر مصر ھونگے اور ھم کمال بے نیازی سےاپنی من پسند چند سبزیوں کو منتخب کر کے باقی سب انھیں واپس کر دیں گے۔۔۔ اور دریا دلی سے کہیں گے ” یہ ھماری ضرورت سے ذیادہ ھیں۔۔ آپ کسی اور کو دے دیجیئے۔۔ اور دکاندار کھکھلاتے ھوئے کہتا ھوگا باجی کوئی لینے والا ھی نہیں بچا۔۔۔  یہی تو ھے اپنی ریاست مدینہ کی جیتی جاگتی مثال … ان ھیں دلفریب خیالوں میں گم ابھی ھم بھرپور جوش وخروش کا مظاھرہ کرنا ھی چاھتے تھے اور ڈی چوک کی طرز پہ اپنے دوپٹے کو ھاتھ میں گھما گھما کر لہراتے ھوئے ھوئے “روک سکو تو روک لو تبدیلی آئی رے ” کی تان چھیڑنے ھی والے تھے کہ صاحب کی آواز نے سوچوں کے سرپٹ گھوڑے کو لگام ھی دے ڈالی۔۔۔۔

تم بھی کتنی جلدی بیوقوف بن جاتی ھو۔۔۔ وہ مشیر محترم سترہ سے پہلے تین سو لگانا بھول گئے ھونگے۔۔۔ ویسے بھی یہ لوگ مہنگائی کو ھم عوام کی کرنسی میں نہیں دیکھتے۔۔۔ یہ اپنے اصلی وطنوں کی کرنسی میں موازنہ کرتے ھیں۔۔ سترہ ڈالر تو نہیں کہہ دیا کہیں جلدی میں۔۔۔ صاحب اور بھی کچھ لعن طعن فرما رھے تھے مگر سمجھ میں کچھ بھی نہیں آرھا تھا کہ اتنا سب سن کر ھمارے دل و دماغ میں تو راحت ھی بہت تھی۔۔۔ مطلب راحت فتح علی ھی گونج رھے تھے
چھن سے جو ٹوٹے کوئی سپنا
جگ سونا سونا لاگے
کوئی رھے نہ جب اپنا۔۔۔۔🍎💔

(Visited 1 times, 1 visits today)

Leave a Reply

Leave A Reply

%d bloggers like this: