دماغی امراض اور ہماری ذمہ داریاں —- محمد شافع صابر

0

تقریباً دو سال قبل کی بات ہے، ہمارا behavioral science کا لیکچر ہو رہا تھا، پروفیسر صاحب (جو ایک مشہور ماہر نفسیات ہیں)، نے خلاف توقع پانچ منٹ پہلے ہی لیکچر ختم کر دیا، انھوں نے ایک فقرا بولا، جو تب ہم نے اتنی توجہ سے نہیں سنا تھا، فقرا یہ تھا “اب وقت آ گیا ہے کہ ہمیں “mental illness”، کو سیریس لینا ہو گا، ڈنگ ٹپاؤ سے اب کام نہیں چلے گا”

10 اکتوبر بروز جمعرات کو، پوری دنیا میں world mental health day منایا گیا۔ اس دن کا مقصد لوگوں کو دماغی صحت اور امراض کے بارے میں آگاہی دینا ہے۔

یہ دماغی بیماریاں کیوں ہوتی ہیں۔ اس کے پیچھے کئی عوامل ہوتے ہیں۔ مثلاً جو لوگ شراب نوشی کرتے ہیں، ان میں ان بیماریوں کے خطرات بڑھ جاتے ہیں۔ زیادہ سڑیس لینے سے بھی یہ بیماریاں ہو سکتی ہے۔ جن فیملیز میں ان بیماریوں کی ہسڑی ہوتی ہے، ان کے رشتہ داروں میں ان بیماریوں کے ہونے کے امکانات کافی زیادہ بڑھ جاتے ہیں۔

ایسے ہی، وہ لوگ جن کے ساتھ بچپن میں کوئی حادثہ درپیش آتا ہے، یہ بیماریاں ایسے لوگوں میں زیادہ ہوتی ہے۔ child abuse، sexual abuse، کا بھی ان بیماریوں میں کافی عمل دخل ہوتا ہے۔

ہمارے دماغ میں کچھ کیمیکلز (مادے) پائے جاتے ہیں، جنھیں neurotransmitters کہتے ہیں، ان کی کمی یا زیادتی دونوں ہی دماغی امراض ہونے کی بڑی اہم وجہ ہیں۔

دماغی بیماریوں کی کوئی واضح کلاسفیکشن تو نہیں، لیکن انھیں عام طور پر ان کو ان گروپس میں تقسیم کیا جاتا ہے، mood disorders، anxiety disorders، personality disorders، psychotic disorders، eating disorders، اور stress disorders.
بدقسمتی سے وطن عزیز میں دماغی امراض میں روزبروز اضافہ چلا جا رہا ہے۔ ہم میں زیادہ و بیشتر ان امراض کو سنجیدہ ہی نہیں لیتے، جس کی وجہ سے زیادہ تر لوگ علاج سے محروم رہتے ہیں۔ اس سے زیادہ افسوس کی بات یہ ہے، اگر کسی خاندان کے کسی فرد میں کوئی دماغی مرض نکل آئے تو گھر والے شرمندگی سے بچنے کے لیے نہ تو کسی کو بتاتے ہیں اور نا ہی ڈاکٹر سے رجوع کرتے ہیں، جس کی وجہ سے مریض کی حالت مزید بگڑتی ہے۔

ہمارے ہاں غلط فہمی پنپنے میں ذرا سی بھی دیر نہیں لگتی۔ جسے ہی ہمیں پتا چلتا کہ فلاں بندہ نفسیاتی مرض میں مبتلا ہے، ہم اسے فوراً پاگل ڈکلیئر کر دیتے ہیں، وہ بندہ اگر پاگل نہ بھی ہو لیکن ہمارے رویے سے ضرور پاگل ہو جاتا ہے۔

ان بیماریوں میں مبتلا مریض اول تو ڈاکٹرز سے رجوع کرتے ہی نہیں، اگر کرتے ہیں تو لیٹ کرتے ہیں، اور اگر کر بھی لیں تو ڈاکٹر کی بات ماننا گوارا نہیں کرتے، جس کی وجہ سے یہ بیماریاں جلدی ٹھیک نہیں ہوتیں۔

اکثر لوگوں میں یہ غلط فہمی پائی جاتی ہے کہ یہ امراض ناقابلِ علاج ہوتے ہیں۔جو کہ سراسر غلط ہے، یہ امراض قابل علاج ہیں، ہاں ان کو ٹھیک کرنے میں باقی بیماریوں کی نسبت زیادہ وقت لگتا ہے۔

ہمارے ہاں ان بیماریوں کا cure rate بہت کم ہیں۔ اس کے کم ہونے کی بڑی وجہ ڈاکٹر کی نصیحت پہ صحیح عمل نہ کرنا، فیلمی سپورٹ نہ ہونا ہیں۔

ان امراض میں مبتلا افراد کو ان کی فیملی کی زیادہ سپورٹ درکار ہوتی ہے، لیکن ہمارے ہاں یہ کام بھی الٹا ہے۔ اکثر دیکھا گیا ہے، ایسے افراد کے ساتھ ان کی فیملیز کا رویہ بدل جاتا ہے، انھیں وہ توجہ اور سپورٹ نہیں دی جاتی جس کی انھیں ضرورت ہوتی ہے اور یوں بجائے ٹھیک ہونے کے ان کی صحت مزید بگڑتی ہے۔

ہمارے ہاں ایک اور سخت غلط فہمی رائج ہے وہ یہ ہے کہ یہ دماغی مرض ہوتے نہیں، یہ جنوں/چڑیلوں کی واردات ہے، بجائے ڈاکٹر سے علاج کروانے کے، ہم مریض کو بابوں، فقیروں کے پاس لے جاتے ہیں، جو ٹائم ضائع کرنے کے سوا کچھ نہیں۔

دماغی /نفسیاتی امراض کے علاج کے مختلف طریقے ہیں۔ اس میں ادویات سے علاج، psychotherapy، behavioural therapy، شامل ہیں۔کچھ ماہر نفسیات دوائیوں سے زیادہ behavioural therapy پر زور دیتے ہیں۔

ترقی یافتہ ممالک میں دماغی امراض کے مریضوں کے لیے سوسائٹیز اور support groups بنائے گئے ہیں، جو ان مریضوں کی دیکھ بھال کرتے ہیں، ان گروپس کی بدولت بیماری کے جلد ٹھیک ہونے کے امکان بڑھ جاتے ہیں۔

دماغی امراض کے مریض پاگل نہیں ہیں، ہمیں یہ بات سمجھنی ہو گی، یہ لوگ ہماری محبت اور توجہ کے مستحق ہیں۔ یہ لوگ مکمل طور ہر ہماری سپورٹ پر منحصر کرتے ہیں۔اگر آپ کے خاندان میں کوئی اس مرض کا شکار ہے، تو چھپائیے اور شرمائیے مت، اس کا ہاتھ تھامیے، اس کا ساتھ دیجیے، اس کو مکمل توجہ دیں جس کا وہ سب سے زیادہ مستحق ہے، اور جلد از جلد ڈاکٹر سے رجوع کریں۔

پاکستان میں ان بیماریوں کی آگاہی نہ ہونے کے برابر ہے، اکیسویں صدی میں بھی ہم بابوں اور فقیروں پر آس لگائے بیٹھے ہیں۔ حکومت پاکستان کو چاہیے کہ عوام میں ان بیماریوں کی آگاہی کے لیے نیشنل لیول پر آگاہی مہم شروع کرے۔عوام الناس کو ان بیماریوں کے متعلق مکمّل معلومات فراہم کی جانی چاہییں۔

سرکاری ہسپتالوں میں خصوصی psychiatry clinics اور wards ہونے چاہیے۔جہاں ان بیماریوں کی مکمّل تشخیص اور علاج کی سہولت مہیا ہو۔ support groups کے قیام کے لیے سول سوسائٹی کو اپنا کردار ادا کرنا چاہیے!

ورلڈ مینٹل ہیلتھ ڈے کا یہی تقاضا ہے کہ ان امراض میں مبتلا لوگوں کو اکیلا مت چھوڑا جائے، ان کی مکمل مدد کی جائے تاکہ وہ ایک مہذب معاشرے کے کار آمد شہری بن سکیں اور ایک نارمل زندگی گزار سکیں۔

(مضمون نگار، یونیورسٹی آف ہیلتھ سائنسز لاہور میں، فائنل ائیر ایم بی بی ایس کے طالب علم ہیں)

(Visited 1 times, 1 visits today)

Leave a Reply

Leave A Reply


Parse error: syntax error, unexpected '<', expecting identifier (T_STRING) or variable (T_VARIABLE) or '{' or '$' in /home/daanishp/public_html/wp-content/themes/daanishv2/footer.php on line 20