اقبال حضور رسالت مآب ﷺ میں —– فتح محمد ملک

0
  • 63
    Shares

ہر چند اقبال نے رسمی معنوں میں کبھی نعت نہیں کہی تاہم عشقِ رسولﷺ کا یہ عالم ہے کہ اُن کا تخیل بار بار انھیں بارگاہِ رسالت مآب ﷺ میں لے جاتا ہے، جہاں وہ ملتِ اسلامی کی زبوں حالی پر فریاد کناں نظر آتے ہیں۔ہوتا یوں ہے کہ جب وہ قومی، ملّی اور انسانی مصائب پر غور و فکر میں منہمک ہوتے ہیںتو اچانک اُنھیں آنحضورﷺ کی ذات والا صفات تاریخِ انسانی کی سب سے بڑی محسنِ انسانیت شخصیت کے رُوپ میں اچانک یاد آ جاتے ہیں اور وہ زیرِ نظر موضوع کی مناسبت سے نہایت والہانہ انداز میں آنحضورﷺ کے فیضان کا ذکرکرنے لگتے ہیں۔ اِس کی ایک مثال بالِ جبریل کی وہ غزل ہے جس کے پہلے دو شعر انسانی شخصیت و کردار پر غلامی اور آزادی کے اثرات پرغوروفکر سے عبارت ہیں:

غلامی کیا ہے؟ ذوقِ حُسنِ زیبائی سے محرومی
جسے زیبا کہیں آزاد بندے، ہے وہی زیبا
بھروسہ کر نہیں سکتے غلاموں کی بصیرت پر
کہ دُنیا میں فقط مردانِ حُر کی آنکھ ہے بینا

بعد کے اشعار میں برطانوی استعمار سے پنجہ آزمائی میں یدِ بیضا کی اہمیت اُجاگر کرتے وقت اُنہیں اچانک وہ مبارک ہستی یاد آ جاتی ہے جس نے انسان کو ہر نوع کی غلامی سے آزاد کر دیا تھا۔چنانچہ اُن کی زبانِ قلم پر درج ذیل مقبولِ عام نعتیہ اشعار رواں ہو جاتے ہیں:

وہ دانائے سبُل، ختم الرسل، مولائے کُلﷺ جس نے
غُبارِ راہ کو بخشا فروغِ وادیِ سینا
نگاہِ عشق و مستی میں وہی اوّل، وہی آخر
وہی قُرآں، وہی فرقاں، وہی یسیں، وہی طہ

اِسی طرح جب وہ فلسطین کانفرنس کے دوران دُنیائے اسلام کے سرکردہ سیاسی رہنمائوں اور نامور دانشوروں سے مل کر اِس نتیجے پر پہنچتے ہیں کہ: ’قافلہ حجاز میں ایک حسین بھی نہیں‘تو وہ تڑپ اُٹھتے ہیں اور اُن پر درج ذیل نعتیہ اشعار نازل ہونے لگتے ہیں:

لوح بھی تُو، قلم بھی تُو، تیرا وجود الکتاب
گُنبدِ آبگینہ رنگ تیرے محیط میں حباب
عالمِ آب و خاک میں تیرے ظہور سے فروغ
ذرہِ ریگ کو دیا تُو نے طلوعِ آفتاب
شوکتِ سنجر و سلیم تیرے جلال کی نمود
فقر جُنید و بایزید تیرا جمالِ بے نقاب
شوق ترا اگر نہ ہو میری نماز کا امام
میرا قیام بھی حجاب، میرا سجود بھی حجاب
تیریﷺ نگاہِ ناز سے دونوں مراد پا گئے
عقل، غیاب و جستجو! عشق، حضور و اضطراب
تیِرہ و تار ہے جہاں گردشِ آفتاب سے
طبع زمانہ تازہ کر جلوہِ بے حجاب سے!

ہمار ی دُنیانورِ مصطفیﷺ سے محروم ہو کر تِیرہ و تار ہو چکی ہے۔چنانچہ ہمارا جہاں ’ہنوز اندر تلاشِ مصطفی است‘۔اقبال سراپا نگاری کے سے رسمی موضوعات سے اعتنا نہیں کرتے۔اُن کی توجہ ہمیشہ باطنی اور خارجی زندگی میں اُس انقلاب پر مرکوز رہتی ہے جوآنحضورﷺکی مبارک زندگی اور تعلیمات سے پھوٹا تھا-درج بالا حوالہ جات میں ع: ’ذرہء ریگ کو دیا تو نے طلوعِ آفتاب‘، اور ع:’غُبارِ راہ کو بخشا فروغِ وادیِ سینا‘کے سے مصرعے اُس انقلاب کے نقیب ہیں جس کے اعجاز سے گری پڑی اور پامال خلقِ خدا میں خدا کا جلوہ دیکھا جانے لگا تھا- حریّت، اخوت اور مساوات کی انسانی اقدار کی بازیافت کی تمنّا اقبال کو بار بار آنحضور ﷺکی انقلابی تعلیمات کی جانب متوجہ کرتی ہے اور وہ بار بار مگر ہر بار بہ اندازِ دگر آنحضور ﷺکی پیروی کی تلقین کرتے ہیں:

طرحِ عشق انداز، اندر جانِ خویش
تازہ کن بامصطفی پیمانِ خویش

اقبال آنحضورﷺ کے ظہورکو شبابِ زندگی سے تعبیر کرتے ہیں- ارتقائے حیات کے ساتھ ساتھ ہر خطہء زمین اور ہر عہد کی روحانی ضروریات کے پیشِ نظر وقتا فوقتا انبیائے کرام ظہور کرتے رہے- آنحضورﷺ نے زندگی کے ارتقاء کی اُس منزل پر ظہور فرمایا جب زندگی شعور کی پختگی کی منزل پر پہنچ چکی تھی:

شعلہ ہائے اُو صد ابراہیم سوخت
تا چراغِ یک محمد بر فروخت
(مثنوی اسرار و رموز)

یہی وجہ ہے کہ آنحضورﷺ ایک ایسا پیغامِ ربانی لے کرتشریف لائے جوآئندہ تمام زمانوں اور دُنیا کی ساری زمینوں کے لیے ابدی پیغامِ ربانی کی حیثیت رکھتا تھا- یہی وجہ ہے کہ خاتم المرسلینﷺ تمام انسانوں کو مخاطب کرتے ہیںاور اس انداز سے کرتے ہیں کہ علامہ اقبال اسلام کے ظہور کوعقل کا ظہور قرار دیتے ہوئے تمام انسانوں کو اسلام کے پیغام کی جانب متوجہ کرتے ہیں-

اپنی شاعری کے دورِ اوّل میں وہ ملتِ اسلامیہ کی انتہائی اندوہناک صورتِ حال کی چارہ گری کی تمنا میں کبھی تو آنحضورﷺ کی خدمتِ اقدس میں سراپا فریاد نظر آتے ہیں اور کبھی اللہ میاں کے حضورشکوہ سنج :

حضورﷺ! دہر میں آسودگی نہیں ملتی
تلاش جس کی ہے وہ زندگی نہیں ملتی
ہزاروں لالہ و گُل ہیں ریاضِ ہستی میں
وفا کی جس میں ہو بو، وہ کلی نہیں ملتی
مگر میں نذر کو اِک آبگینہ لایا ہوں
جو شے ہے اِس میں وہ جنت میں بھی نہیں ملتی
جھلکتی ہے تیری اُمت کی آبرو اِس میں
طرابلس کے شہیدوں کا ہے لہو اِس میں
(حضورﷺ رسالتِ مآب میں)

اللہ میاں سے اسی نوع کے شکوہ کا جواب فریاد کی بجائے عمل کی تلقین ہے اور عمل بھی وہ جس سے پستی میں ٹھوکریں کھاتی ہوئی مخلوق بلند و بالا مقام پر فائز کی جا سکے :

قوتِ عشق سے ہر پست کو بالا کر دے
دہر میں اسمِ محمدﷺ سے اُجالا کر دے

اور:

عقل ہے تیری سپر عشق ہے شمشیر تری
مرے درویش! خلافت ہے جہانگیر تری
ما سوی اللہ کے لیے آگ ہے تکبیر تری
تو مسلماں ہو تو تقدیر ہے تدبیر تری
کی محمدﷺ سے وفا تو نے تو ہم تیرے ہیں
یہ جہاں چیز ہے کیا لوح و قلم تیر ے ہیں
(جوابِ شکوہ)

یہاں سے اقبال کی فکر و نظر کادُوسرا دور شروع ہوتا ہے۔اب اُنہیں شعوری ارتقاء کے اُس مقام پر رسائی حاصل ہو چکی ہے جہاں اُنہیں اِس حقیقت کا عرفان حاصل ہے کہ دُنیائے اسلام کی تمام تر زبوں حالی کاسبب محمدﷺ سے بے وفائی ہے اور اس زوال کو عروج میں بدلنے کا واحد ذریعہ محمد ﷺ سے وفا ہے۔اس وقت مجھے ’’پس چہ باید کرد اے اقوامِ شرق‘‘ میں شامل وہ نظم یاد آ رہی ہے جس کے آغاز میں اقبال اس بات پر نازاں نظر آتے ہیں کہ اُن کی فکر نے آنحضورﷺ کے احسانات کی گود میں پرورش پائی ہے۔ یہاں وہ اپنی زندگی میں آنحضورﷺ کے فیضان کو یوں پیش کرتے ہیں جیسے فقط اقبال کی ذات ہی نہیں بلکہ پوری کائنات آنحضور ﷺ کے احسانات کی ثناخواں ہے۔ ان سارے احسانات کو اگر ہم ایک فقرے میں بیان کرنا چاہیں تو وہ کچھ یوں ہوگا کہ آنحضورﷺ اسلام کا جو انقلابی پیغام لائے ہیں اُس نے دُنیائے انسانیت کو روشن خیالی اور سائنسی شعور کی نعمت سے مالا مال کر دیا ہے، پرانے بُت جلا کر راکھ کر دیئے ہیں اور یوں پرانی کائنات کو فرسودگی کے چُنگل سے رہائی دلا کر اسے تجدید و ارتقاء کے نِت نئے مراحل سے آشنا کر دیا ہے:

سوختی لات و مناتِ کہنہ را
تازہ کر دی کائناتِ کہنہ را
در جہانِ ذکر و فکرِ انس و جاں
تو صلوتِ صبح، تو بانگ اذاں
لذتِ سوز و سرور از لا الہ
در شبِ اندیشہ نور از لا الہ
نے خداہا ساختیم از گاؤخر
نے حضورِ کاہناں افگندہ سر
نے سجودے پیشِ معبودانِ پیر
نے طوافِ کوشکِ سلطان و میر
ایں ہمہ از لطفِ بے پایانِ تست
فکرِ ما پروردہ احسانِ تست

ان اشعار میں اسلام کا تاریخی کردار نمایاں کرتے وقت اقبال نے بطورِ خاص اس حقیقت کو اُجاگر کیا ہے کہ آنحضور ﷺ کی ذاتِ بابرکات نے اِنسان کو پتھروں اور درختوں کی پوجا سے آزاد کرایا، صرف لات و منات ہی نہیں بلکہ گائے اور گدھے کی عبادت میں مصروف آدمی کو لا الہ کا نعرہ بلند کر کے اِن جھوٹے خُداؤں کے جادوسے رہائی بخشی اور سب سے بڑھ کر بادشاہوں، ملاؤں اور جاگیرداروں کی خُدائی سے انکار کا حوصلہ بخشا۔ گویا اسلام کا ظہور انسانی مساوات اور سلطانی جمہور کے تصورات کا عملی ظہور ہے۔اسلامی فکر کی نئی تشکیل کے موضوع پراپنی کتاب بعنوان: “The Reconstruction of Religion Thought in Islam”میں لکھتے ہیں:

“The Prophet of Islam seems to stand between the ancient and the modern world. In so far as the source of his revelation is concerned he belongs to the ancient world; in so far as the spirit of his revelation is concerned he belongs to the modern world. In him life discovers other sources of knowledge suitable to its new direction. The birth of Islam is the birth of inductive intellect. In Islam prophecy reaches its perfection in discovering the need of its own abolition. The abolition of priesthood and hereditary kingship in Islam, the constant appeal to reason and experience in the Qur’an, and the emphasis that it lays on Nature and History as sources of human knowledge, are all different aspects of the same idea of finality.”(1)

درج بالا پیراگراف میں ختمِ نبوت کے تصور کی تہذیبی اور سائنسی تفسیر کرتے وقت اقبال نے اپنے ایمان پرور اور محکم استدلال کے ساتھ یہ کہا ہے کہ اسلام میں نبوت ختم ہونے کے ساتھ ہی خاندانی بادشاہت اور ملاّئیت کے ادارے بھی ختم ہو کر رہ گئے ہیں- چنانچہ اسلام کا ظہور عقل کے ظہورسے عبارت ہو کر رہ گیا ہے- مثنوی اسرار و رموز میں اس موضوع کو مختلف اور متنوع انداز میں بیان کیا گیا ہے- درج ذیل اشعار میں اسلام کا مقصود انسانی اخوت، مساوات اور حریّت کی اقدار کا فروغ و استحکام بتایا گیا ہے:

بود انسان در جہان انسان پرست
ناکس و نابود مندو زیردست
سطوت کسری و قیصر رہزنش
بندہا در دست و پا و گردنش
کاہن و پاپا و سلطان و امیر
بہریک نخچیر صد نخچیر گیر
صاحب او رنگ و ہم پیر کنشت
باج برکشت خراب او نوشت
از غلامی فطرت او دون شدہ
نغمہ ہا اندر نئے او خون شدہ
تا امین حق بحقداران سپرد
بندگانِ را مسند خاقان سپرد
(در معنی اینکہ مقصود رسالت محمدیہ تشکیل و تاسیس حریت و مساوات اخوت بنی نوع آدم است)

کلامِ اقبال میں ایک بڑی نادر و نایاب نظم جلوہ گر ہے جس میں ہجو بلکہ واسوخت کے پیرایہء اظہار میں عالمِ انسانیت پر آنحضورﷺ کے احسانات گنوائے گئے ہیں-یہ نظم جاوید نامہ میں فلکِ قمر کی وادیء طواسین میں اُس مقام پر دی گئی ہے جہاں مختلف پیغمبروں کا تذکرہ کیا گیا ہے-یہاں طاسینِ محمد اُس انقلاب کے فیوض و برکات کی آئینہ دار ہے جو ظہورِ اسلام کی دین ہیں-یہاں اقبال نے ابوجہل کی رُوح کو حرمِ کعبہ میں نوحہ کناں دکھایا گیاہے- ابوجہل اسلام کے اعجازسے دورِ جاہلیت کے انسانیت سوز اصول و اقدار کے نیست و نابود ہو جانے پرنالہ زنی میں مصرورف ہے-اس طویل نظم کے فقط چند اشعار درج ذیل ہیں:

سینہِ ما از محمد داغ داغ
از دم او کعبہ را گل شد چراغ
از ہلاک قیصر و کسری سرود
نوجوانان راز دست مار بود
ساحر و اندر کلامش ساحری است
این دو حرف لا الہ خود کافری است
تابساط دین آبا در نورد
با خداوندان ما کرد آنچہ کرد
پاش پاش از ضربتش لات و منات
انتقام از وی بگیر ای کائنات
مذہب او قاطع ملک و نسبت
از قریش و منکر از فضل عرب
در نگاہ او یکے بالا و پست
با غلام خویش بر یک خوان نشست
قدر احرار عرب نشناختہ
با کلفتان حبش در ساختہ
احمران با اسودان آمیختند
آبروے دودمانی ریختند
این مساوات این مواخات اعجمی است
خوب میدانم کہ سلمان مزدکی است

دورِ جاہلیت میں رنگ و نسل، آقا و غلام اور عرب و عجم کے امتیازات انسانی زندگی کو جہنم زار بنائے ہوئے تھے- طلوعِ اسلام نے انسانوں کے درمیان ان طبقاتی، جغرافیائی اور نسلی امتیازات کو مٹا کرانسانی مساوات،اخوت اور حریّت کی اقدار کو رائج کیا-اس اسلامی انقلاب نے جہاں خاک نشینوں کو سربلندی اور سرفرازی بخشی وہاں دورِ جاہلیت کی معاشرت اور معیشت کی کایا پلٹ کر رکھ دی تھی- اِس نظم میں ابوجہل کوماضی کے اُس استحصالی اور استبدادی نظام کی موت پر واویلا کرتے ہوئے یوںدکھایا گیا ہے کہ جہاں دورِ جاہلیت کی انسانیت سوز روایات کی موت برحق ثابت ہو گئی ہے وہاں اسلام کی انسانیت پرور نئی روایات کے زندگی بخش اثرات نمایاں تر ہو گئے ہیں- یہ بلاشبہ آنحضورﷺ کی خدمت میں ایک نادر و نایاب نذرانہء عقیدت ہے- ایک ایسا نذرانہء عقیدت جو آنحضورﷺ کی قیادت میں برپا ہونے والے اسلامی انقلاب کے معاشی، معاشرتی اور روحانی خدوخال کو روشن کر کے اپنے زمانے اور آنے والے زمانے کو اسلام کی حقیقی انقلابی تعلیمات کی جانب متوجہ کرتا ہے-

یہ ایک ناقابلِ تردید حقیقت ہے کہ اقبال کی فکر اور اُن کا فن نورِ مصطفی سے مستنیر ہے- نسیمِ حجاز ہی اُن کے افکارکی کھیتی کو پروان چڑھاتی اور سرسبز و شاداب رکھتی چلی آئی ہے-شاید یہی وجہ ہے کہ اُنھوں نے اپنے دمِ واپسیں بڑی حسرت کے ساتھ کہا تھا کہ:

نسیمے از حجاز آید کہ ناید
سرودِ رفتہ بازآید کہ ناید
سرآمد روزگارے ایں فقیرے
دگر دانائے راز آید کہ ناید

ہرچند ہمارے ہاں ابھی تک اقبال کے بعد کوئی اور دانائے راز نہیں آیا تاہم ہماری دُنیا بھی اُمید پر قائم ہے۔


یہ بھی ملاحظہ کیجئے: اقبال اور پاکستان: درست تناظر —— عامر منیر

Leave a Reply

Leave A Reply

%d bloggers like this: