کارل مارکس کی ایک نظم ۔۔ ترجمہ: ممتاز رفیق

0

(محبت کی کتاب میں سے (حصہ اول

جینی کے لیے الوداعی سانٹ

 

لے جائو، لے جائو یہ سب گیت مجھ سے

،جن کی چاہت تمہارے قدموں میں نیازمندانہ پڑی ہے

،جہاں، بربط کی نغمی بکھری ہوئی ہے

روح آزادانہ دمکتی شعائوں کے  نزدیک تر آچکی۔

،آہ! اگر گیتوں کی گونج پُر اثر ہوسکتی

میں اپنے ارمان بھرے جذبوں کو مدھر نغمات کا روپ دیتا

تاکہ دل کی دھڑکنوں کو اتھل پتھل کرسکوں

تا آنکہ تمہارا پُر غرور دل انتہا ئی حد تک ڈگمگا جائے

پھر کچھ فاصلے سے میں اس کا مشاہدہ کرتا کہ

کیسے فتح مندی تمہیں روشنی کے ساتھ اٹھا لے جاتی ہے

تب میں جنگ آزما ہوسکتا کچھ فاصلے پر زیادہ بے خوفی سے

تب میری موسیقی آسمان کی رفعتوں کو چھو سکتی

میرے گیت ہیئت بدل کر زیادہ آزادی سے گردش کرسکتے

اور میرا بربط شیریں افسردگی سے رو سکتا 

Concluding Sonnets to Jenny Carl Marx

CONCLUDING SONNETS TO JENNY

 I

 Take all, take all these songs from me

 That Love at your feet humbly lays,

 Where, in the Lyre’s full melody,

 Soul freely nears in shining rays.

 Oh! if Song’s echo potent be

 To stir to longing with sweet lays,

 To make the pulse throb passionately

 That your proud heart sublimely sways,

 Then shall I witness from afar

 How Victory bears you light along,

 Then shall I fight, more bold by far,

 Then shall my music soar the higher;

 Transformed, more free shall ring my song,

 And in sweet woe shall weep my Lyre.

 II

 To me, no Fame terrestrial

 That travels far through land and nation

 To hold them thrillingly in thrall

 With its far-flung reverberation

 Is worth your eyes, when shining full,

 Your heart, when warm with exultation,

 Or two deep-welling tears that fall,

 Wrung from your eyes by song’s emotion.

 Gladly I’d breathe my Soul away

 In the Lyre’s deep melodious sighs,

 And would a very Master die,

 Could I the exalted goal attain,

 Could I but win the fairest prize —

 To soothe in you both joy and pain.

 

 

About Author

Daanish webdesk.

Leave a Reply

Leave A Reply

%d bloggers like this: