جیئرن جو دڑو (زندوں کا ٹیلہ) : سلمیٰ جیلانی

0
  • 8
    Shares

امر کی آنکھ کھلی تو سارا جسم پسینے سے شرابور تھا– یہ کیسا خواب تھا جو کئی راتوں سے مسلسل اس کا پیچھا کر رہا تھا-

سانولی نازک سی لڑکی جیسے صنوبر کی شاخ ، اس کی کلائیاں تھر ی عورتوں کی طرح سفید کڑوں سے بھری ہوتیں، کبھی کھنڈرات سے نکلتی اورپانی سے بھرے وسیع و عریض تالاب میں کود جاتی، وہ اس کا پیچھا کرتا اور تالاب تک پہنچتا تو پانی اور لڑکی دونوں غائب ہو جاتے، اس کا دل اک عجیب خوف سے گھر جاتا اور تبھی اس کی آنکھ کھل جاتی۔

آج بھی ایسے ہی خواب سے جاگا تو اس کے دوست ڈنو، پربھا اور بچائو اس کے سرہانے کھڑے آوازیں لگا رہے تھے، یہ سب کے سب ایک عرصے سے اس بڑے ٹیلے پر نگاہیں جمائےہوئے تھے، ڈنوکا خیال تھا اس کے نیچے کوئی بہت بڑا خزانہ دفن ہے اور اگر وہ اس کی تہ تک پہنچنے میں کامیاب ہو گئے تو ان کے دن پھر جائیں گے، اسی چکر میں بڑے ٹیلے سے کچھ دور سندھو دریا سے آنے والی نرم چکنی مٹی کے اونچے نیچے ڈھیر پر خیمہ لگائے بیٹھے تھے اور سوندھی مہک میں بسی زمین کی کھدائی میں دن رات ایک کئےہوئے تھےاس وقت بھی ان کے ہاتوں میں کدالیں اور مٹی بھرنے کےتھیلے کندھوں پر پڑے تھے۔

ڈنو کہہ رہا تھا” امر—— منجھو بھا —- تیری وجہ سے ہم پکڑے جائیں گے — میں نے تجھ سے کہا تھا صبح ہونے سے پہلے ہمیں اپنا کام ختم کر دینا ہے — مگرتو ہے کہ سویا پڑا ہے”امر ہڑ بڑا کر اٹھا —— اور ان کے ساتھ جانے کی تیاری کرنےلگا——-کئی دنوں کی تگ و دو کے بعد وہ مٹی کی دبیز تہیں ہٹانے میں کامیاب ہو رھے تھے– لیکن —- یہ کیا — یہ تو اینٹوں اور پتھر سے بنا کوئی قدیم شہر برآمد ہو رہا تھا —-وہ بہت مایوس دکھائی دیتے تھے — خزانے کی آس دم توڑتی جا رہی تھی —-پھر بھی وہ کھود رہے تھے — پسینہ ان کے جسموں سے پانی کی طرح بہ رہاتھا — سورج کی پہلی کرن زمین سے ٹکرائی اور صدیوں سے مٹی کے نیچے دبا حوض جو کبھی پانی سے بھرا ہوتا ہو گا واضح ہو کرسامنے آ گیا —- امر چونک گیا — یہ تو بالکل ویسا ہی تھا جیسا خواب میں نظر آتا ہے — اس نے دل میں سوچا مگر بولا نہیں — اگر انھیں بتاؤں تو ہنسیں گے ——وہ سوچ رہاتھا — وہ چاروں ملبہ سے پر تالاب کی منڈیر پر سستانے کو بیٹھ گئے —- سامنے جوکھنڈر تھا وہ کل کی کھدائی میں انہوں نے دریافت کیا تھا ——- تلے اوپر رکھی پکی اینٹوں کی ترتیب اور دیواروں کے آثار بتا رہے تھے—- یہ کبھی دو منزلہ مکان رہا ہو گا — وہ قدیم سندھی زبان میں آپس میں باتیں کر رہے تھے —- امر ان کے گروپ میں وہ واحد فرد تھا جوآثار قدیمہ سے واقفیت رکھتا تھا اور اپنے دوستوں کی رہنمائی پر مامور تھا ——وہ کہہ رہا تھا —- “تم سب پاگل ہو —- یہاں کوئی خزانہ نہیں — ہمیں آثار قدیمہ والوں کو ان چیزوں کے بارے میں بتا دینا چاہئے” —-نہ …… بھاری بھر کم پربھا زور سےچلایا —- نہ ھاٹی نہ —– ہو سکتا ہے سونے چاندی کی مورتیاں دبی ہوں یہاں —– ابھی اور کھدائی کرو—- ہمیں پوری راز داری سے کام لینا ہو گا —— یہ خزانہ کسی اور کے ہاتھ نہ لگنا چاہئے ” وہ زور دے کر بولاپربھا اور بھی جانے کیا کیا کہہ رہا تھا لیکن امر کی نگاہیں اس کھنڈر کی اوپری منزل کے کھڑکی نما خلا کی جانب ٹکی تھیں —– اس ملگجے اندھیرے میں کوئی سایہ اسے اپنی طرف بلاتا ہوا محسوس ہوا ——اسے لگا جیسے وہ لڑکی ایک لمحے کو اپنی جھلک دکھا کر اندھیرےمیں گم ہو گئی ہو —–وہ کسی مسحور معمول کی طرح اپنی جگہ سے اٹھا اور اس گھر کی طرف قدم بڑھانے لگا —- پربھا اور ڈنو بحث میں لگے تھے لیکن بچائو نے اسے اس طرف جاتے دیکھ لیا تھا ” امر — کہاں جارہا ہے —- ارے او ….. کہاں چلا جا رہا ہے —– مگر اس کے قدم تو آپ ہی آپ …….مکان کی جانب بڑھ رھے تھے اور کان جیسے سن ہی نہیں رہے تھے —- وہ تو اپنے اندر کی آواز کو سن رہا تھاجو جدائی کا گیت الاپ رہی تھی

سندھڑی ری مار گے اڈی جائے دھول (رستوں پہ دھول اڑ رہی ہے )

———-

وہ اس کھنڈر کی پچھلی جانب پہنچا تو ایک اور ہی منظر اسکے سامنے تھا —-سورج نکل آیا تھا —–گلی میں لوگوں کی آمد و رفت جاری تھی— بڑےسے چبوترے پر بیٹھی عورتیں چرخے سنبھالے دھاگا کاتتے ہوئے ساتھ میں کوئی گیت گاتی جا رہی تھیں — چبوترے کی دو سیڑھیاں اتر کر دھاگے سے کپڑا بننے والوں کی جیسے کاتا لے دوڑی لگی تھی —-گلی کے نکڑ پر منچلے نوجوانوں کا گروہ چوسر کھیلنےمیں مگن تھا ——” یہ میں کہاں آگیا ہوں —- وہ ابھی اسی حیرانی میں گم تھا کہ پیچھے سے کسی نے کندھے پر ہاتھ رکھا —-“ویداس — تم یہاں کیا کر رہے ہو ” اسے جھٹکا سا لگا “ویداس” یہ مجھے کیاسمجھ رہا ہے …. اس نے دل میں سوچا — لیکن خود اسے اپنے اس طرح سوچنے پر عجیب سا محسوس ہوا…… اسے لگ رہا تھا جیسے وہ اس ماحول اور ان لوگوں میں بالکل بھی اجنبی نہیں بلکہ ہمیشہ سے ان سے واقف ہو—– ان کے ساتھ ہی گزر بسر کرتا آیا ہو —– قدیم انداز کے تہ بند اور کندھے پر یونانی طرز کی چادرڈالے وہ سانولا … دبلا پتلا سا نوجوان اسے مسکراتی آنکھوں سے دیکھ رہا تھا ، اس کے اندازمیں تنبہیہ تھی، نوجوان پھر گویا ہوا “تم نے مٹی کے کھلونے بنا لئے ….کیا” میسو پٹونیا میں تیرے ہاتھ کے بنے برتنوں کی دھوم مچ گئی ہےاس بار برتنوں کے ساتھ مٹی کی بیل گاڑیاں اور جانور بھی لے جاؤں گا ،میں نے سارا سامان کشتی میں بھر دیا ہے —- صرف تیرے حصے کی چیزیں باقی ہیں ، —- ہاں — ایک بات اور —– اگر ساتھ چلنا ہے توجلدی بتا دے ، بڑی کشتی جانے کو تیارہے ” امر نے جواب میں بس اثبات میں سر ہلا دیا —– اس کی نظریں تو اپنے عکس کو تالاب کے پانی میں دیکھ رہی تھیں —– خود وہ بھی اسی نوجوان کی طرح تہبند پہنے تھا لیکن اس پر چادر نہیں تھی —اس کے سر اور داڑھی کے گھنگریالے بال سلیقے سے جمے ہوئے تھے —– اپنا یہ نیا روپ اچھا لگ رہا تھا —- اس کی محویت توڑنےکے لئے نوجوان نے پھر متوجہ کیا —– ” کیا سوچ رہا ہے …. چھوکرو “—— “دودن میں تیاری کر لے —– اگر جانا ہے” —-“اچھا — اچھا”– وہ کوئی اجنبی زبان بول رہاتھا —– “ہاں سوچ کر بتاتا ہوں”—–دھیمے سے کہتاہوا وہ وہاں سے چل دیا ——– راستے میں سوچتا جاتا تھا —– “وہ اجاڑ حلیےوالا امر کہاں گیا —– میں تو مٹی کے کھلونے بناتا ہوں —– ابھی تو میں نے کڑھاوے میں تانبے اور رانگ کو ملا کر ایک نئی چیز بھی بنانی سیکھ لی ہے—– ہاں—- کیاکہہ رہا تھا استاد —شائد — کانسی —– ہاں یہی نام تھا —- زیادہ مضبوط برتن بنارہا ہے وہ —- لیکن میں تو کچھ اور بناؤں گا” —– وہ سوچتا ہوا اس مکان کی طرف چل دیا جس کی کھڑکی میں اکثر ری کھڑی ہوا کرتی تھی —— ری کا خیال آتے ہی دل میں ہلچل سی ہونے لگتی –

—–ری —- دبلی پتلی جیسے سینک سلائی نام تو اس کا سمبارا تھا پر ماں ری کہتی — وہ دڑو کی واحد لڑکی نہ تھی جس کے رنگ روپ کی کشش نوجوانوں کو اپنا دیوانہ بنائے رکھتی تھی ——اس سے اور بھی زیادہ سندر کئی لڑکیاں تھیں مگر اس کے رقص میں کچھ ایسا جادو تھا جس نے جلد ہی اسے سارے قصبے میں مشھور کر دیا تھا —– وہ بھی ہر تہوار پر ایسے تھرکتی جیسے بڑے دریا گھگر ہا میں باڑھ آگئی ہو — تتلی کی طرح کبھی اس ڈال پر تو کبھی اس ڈال پر جھوما کرتی ——ساری لڑکیاں ناچ رہی تھیں لیکن ری ان میں الگ ہی نظر آ رہی تھی حالانکہ نہ سینے کے ابھار اور نہ کولہوں پر نام لینے کو کوئی گوشت—- ماں اس کی طرف غور سے دیکھتی ہوئی بولی “او – ری کے بابا سنتے ہو — یہ چھوکری ہمیں ضرورکسی مشکل میں ڈال دے گی” —– “اگر اس کے ناچ کی خبر بڑے پروہیت کو ہوگئی تو وہ اسے داسی بنا لے گا” ——-” جندو “— ری کے باپ سے اپنی فکر مندی کا اظہار کرتی —— وہ بھی پریشان دکھائی دیتا تھا — مگر تسلی دینے کو کہتا—- زال —تو فکر نہ کر یداس سے بات کرتا ہوں —– وہ سٹھو چھوکرو ہے — کام بھی کرے ہے —– سچی بولوں مجھے پروہیت کا ڈر ہے —- وہ دونوں فکر سے سر جوڑے گہری سوچ میں پڑ گئے

——————پونم کی رات آنے کو تھی —– آسمان پر چاند پوری آب و تاب سے دمک رہا تھا —- ری پر جیسےدورہ سا پڑ گیا وہ اپنا لبادہ سنبھالتی چپکے سے پچھلی دیوار کی طرف پہنچی ، جندو نےبڑے در کے آگے ہی اپنی کھاٹ جو بچھا رکھی تھی —- وہ جانتی تھی —- اس کی بیٹی چاند کی دیوانی ہے اسے دیکھ کر اپنے ہوش کھو دیتی ہے —-ناچ ناچ کر پاگل ہو جاتی ہے—— اس نے گھر سے نکلنے کے سارے راستے بند کر دیئے تھے …. لیکن پانی کو بہنے سے کون روک سکا ہے — ری نے اپنے لبادے کی رسی بنائی — اور خود کو چھوٹی سی مٹی کی دیوار پر اچھال دیا اور گھگرہا دریا کی طرف بھاگتی چلی گئی ——-پیپل کے بڑے درخت کے پیچھے چھپ کر چاند کو دیکھنے لگی —— دھیرے دھیرے اس کے ہاتھ پاؤں رقص کے انداز میں تھرکنے لگے —– یہ نرت بھاؤ اس نے خود دریافت کئے تھے —- آج سےپہلے کوئی اس طرح نہ جھوما تھا اس کی کمر اور بازوؤں کی لچک بید کی لکڑی کو شرما رہی تھی —— اس کے بدن سے لبادہ گر گیا تھا ، چاند کی کرنیں اس کے چمکیلےسیاہی مائل نازک جسم سے ٹکرا کر گھگھر ہا کے ساحل کی نرم ریت میں جذب ہو رہیں تھیں —— اسکے بازوؤں میں ہڈی سے بنے ہوئے کڑے دودھ کی طرح دمک رہے تھے درختوں کی اوٹ میں چھپ کرکوئی اسے دیکھ رہا تھا —— یہ ویداس تھا —- ری کے رقص کے نرت میں کھویا ہوا تھا ——- اس کے بھاؤ کو اپنی نگاہ میں سمو کر اپنے دھیان میں بٹھا رہا تھا ——- دفعتا ً اس کے دماغ میں کوندا سا لپکا —- نئی دھات کے پانی سے ڈھالوں گا — مجسمہ — ری کا مجسمہ—- ری میری پیاری تجھے امر کر دوں گا —— امر — یہ لفظ کچھ مانوس سا محسوس ہوا پر اسے کچھ یاد نہ تھا ….. وہ جوش میں ری کے سامنے آ گیا— جو اب تھک کر زمین پر گر چکی تھی — سارے بدن پر پسینے کی بوندیں — سیاہ ریشمی پھول پر شبنم کےقطروں کی طرح دمک رہی تھیں —— یداس نے قریب پڑا لبادہ اٹھا کر اس کے عریاں بدن کو ڈھانپ دیا —— ری کی آنکھیں بند تھیں —– لیکن اس کے چہرے پر پھیلی مسکراہٹ بتا رہی تھی — وہ آنے والے کو خوب جانتی تھی —–مگر —- ری کو پتا نہ تھا —- پروہیت کی خواب گاہ کی کھڑکی دریا کے اسی کنارے کی طرف کھلتی تھی اور اس وقت بھی اس کی شاطر نگاہیں ادھرہی لگی تھیں وہ اپنے ہونٹوں پر زبان پھیر رہا تھا اور دماغ کسی گہری منصوبہ سازی میں لگا تھا —– پروہیت شمال کی طرف سے یہاں آیا تھا وہ قد آور تھا اور اس کی رنگت گیہوں کے دانے کی طرح تھی — وہ راجا کو اتنا پسند آیا کہ وہیں رہنے لگا —- راجہ نے اپنے برابر کرسی بچھوائی—- اور اسے پروہیت کا نام دیا —— وہ جو کہتا راجہ وہی کرتا —–کسی کو بھی پسند نہیں تھا کہ راجا سپاہی بھرتی کرے—- اب سے پہلے وہ آزادی سے گھومتے کپاس اگاتےاور کپڑا بناتے ، مٹی کے برتن اور کھلونے بناتے انہیں دور دراز کی بستیوں میں کشتی کے ذریعے بیچنے کو جاتے —- لیکن جب سے پروہیت آیا وہ جیسے خود کو قیدی سمجھنے لگے—– لڑکیاں اسے بہت پسند تھیں —- پہلے راجا کی صرف ایک رانی تھی —– لیکن اب تو جو لڑکی اچھی لگتی راجہ کے سپاہی اٹھا لے جاتے —– وہ ایک رات اس کے ساتھ رہتی پھر پروہیت کی داسی بنا دی جاتی — وہ اس کی خدمت کرتی پھر کچھ دن میں کوئی نئی لڑکی اس کی جگہ لے لیتی —-ری کو ناچتے دیکھکر پروہیت کو خیال آیا — ناچنےوالی داسی —— یہ اور تو کوئی کام کی نہیں —– پر ناچ کر میرا دل بہلاۓ گی— وہ مکاری سے زیر لب مسکرا رہا تھا——– ——–

دن چڑھ آیا تھا – ری ابھی تک اس چوکڑی نما چارپائی پر سو رہی تھی جو اس کے باپ نے سفید موٹی نرم روئی اپنے ہاتوں سے بٹ کر بنائی تھی – اسےیہ چوکڑی بہت پسند تھی ، جب لیٹ جاتی تو اٹھنے کا نام نہ لیتی – اس وقت بھی ماں کی تیز آواز کانوں سے ٹکرا رہی تھی وہ سب کھیت جانے والے تھے روئی چگنے کے دن تھے— ماں چلا رہی تھی —- او — ری — اٹھ جا—- سیندوری گائے کو چارہ ڈال —–ری نے آنکھیں ملتے ہوئے سوچا —— یہ ماں بھی بس ایسی ہی ہے خود بھی گائے بکریوں میں گھسی ہے —— مجھے بھی ایسا ہی بنانا چاہتی ہے—— بھائی سے کیوں نہ کہتی ——-” مجھے یہ کام اچھا نہ لگے “—— “ہاں تو پھر کیا کرے گی” —– ماں چلائی —- ہیں—– وہ چونکی— “میں نے منہ سے تو کچھ نہیں کہا —– یہ ماں کو کیسے پتا چل گیا —– اس کا نوخیز ذھن خالی تھا — کروٹ بدل کر دوبارہ سونے کی کوشش کی —– دھڑ دھڑکرتے کوئی اندر آگیا تھا —-بھائی اور بابا کھیت جا چکے تھے پھر یہ کون ہے —- اس نے دہل کر سوچا —– باہر ماں کی آواز آنا بھی بند ہو گئی تھی —– اس نے لیٹے لیٹےہی کھلے در سے آنگن میں جھانکا —- سامنے راجہ کے آدمی کھڑے تھے —- انہیں سوال کرنے کی اجازت نہ تھی اور نہ وہ کچھ بولے بس تیزی سے اندر کمرے میں آئے اور اسے دھکیلتے اپنے ساتھ لے گئے — ری نے پیچھے مڑ کر دیکھا ماں گھٹنوں میں سر دیئے بیٹھی تھی —- اس کا سر اور بدن ہچکولےلے رہا تھا ری سمجھ گئی وہ چپکے چپکے رو رہی تھی —— ری کے چہرے پر حیرت اور خوف جیسے جم گیا تھا —— دماغ میں ان گنت سوال اٹھ رھے تھے لیکن زبان پر تالا لگ گیاتھا ———————- وہ اندھیری کوٹھری میں اوندھے منہ زمین پر پڑی تھی—– مٹی میں سیلن کی بو بسی ہوئی تھی —- وہ سمجھ گئی ……کہیں پاس میں دریا ہے—— اچانک جیسے اس کی حسیں تیزی سے کام کرنے لگی تھیں —- اس نے اٹھنےکی کوشش کی —- مگر پاؤں میں دھاتی کڑے اور اس میں پڑی موٹی مونجھ کی رسی نے وہیں روک دیا ——وہ پھر زمین پر گر گئی ، آنسو گالوں سے بہہ کر سیلی مٹی میں جذب ہونے لگے —— تبھی لکڑی کا بھاری در چر چرایا ——– کوئی گھونگھٹ منہ پر ڈالے اندر آ گیا تھا —– ری نے سوچا —– راجہ کی کوئی داسی ہے اسے سجانے کو آئی ہے تبھی اس کے ہاتھ میں کپڑے سے ڈھکا بڑا ساتھال تھا —— ری نے لیٹے لیٹے کنکھیوں سے اسے دیکھنے کی کوشش کی ——- پھر اس نے اپنی چھلی ہوئی کلائیوں کی طرف دیکھا اس سے پہلے آنے والی دو داسیاں ہڈی کے کڑے اتار کر کسی قیمتی دھات کے کڑے ڈال گئی تھیں اور بتا گئی تھیں آج کی رات وہ راجہ کےمحل میں رقص کرے گی —— اس کا دل امڈ رہا تھا—- وہ تو صرف اپنے لئے ناچتی تھی جیسے مور خوش ہو کر ناچتا ہے وہ بھی ناچتی تھی—– پھر کیوں ناچے کسی کے لئے ——– تبھی اس گھونگھٹ والی نے تھال اس کے پاس رکھ کر —- گھونگھٹ الٹ دیا ——-وہ اچھل پڑی —– آنے والا ویداس تھا —- اس نے ہونٹوں پہ انگلی رکھ اسے خاموش رہنے کا اشارہ کیا—————–

ڈنو پربھا اور بچائو سے چھپ کر امر نے محکمہ اثار قدیمہ کو ان کھنڈرات کے بارے میں بتا دیا تھا——–کوئی پچاس سے زیادہ کارکنوں نے بیلچے اور پھاوڑے سنبھال رکھے تھے جنہوں نے بڑی تیزی سے مٹی کی صدیوں پرانی تہوں کو ہٹا ڈالا تھا ——کھدائی اپنے آخری مراحل میں تھی ———- ایک کارکن کی کدال چھن سے کسی چیز سے ٹکرائی —- سپر وائزر نے اسے ہدایت دی —– ہلکے اوزارلاؤ یہاں کچھ ہے —- کہیں ٹوٹ نہ جائے —— یہ کوئی تہ خانہ تھا جہاں وہ کھڑے تھے—– سامنے روزن کی ٹوٹی ہوئی انیٹیں کوئی کہانی سنا رہی تھیں — مٹی کی تہ سے کسی پتلی دبلی سینک سلائی عورت کا کانسی کا مجسمہ برآمد ہو گیا تھا جو رقص کے انداز میں ایک ہاتھ کمر پر اوردوسرا ہوا میں لہرا رہی تھی اس کے بازو تھری عورتوں کی طرح کڑوں سے بھرے تھے اور تن پر کوئی لباس نہ تھا ، امر جو قریب ہی موجود تھا بے اختیار بول اٹھا ” سمبارا — وہ سب چونک کر اسے دیکھنے لگے — مگر وہ تو کسی اور ہی دنیا میں کھویا ہوا تھا وہ اس جگہ کو موئن جو دڑو یعنی مردوں کا ٹیلہ کہہ رہے تھے –” موئن جو دڑو — امر نے خود کلامی کی —- یہ کیسے ہو سکتا ہے اس سے زیادہ زندہ تو کوئی نہ ہو گا — یہ تو جیئر ن جو دڑو ہے (زندوں کا ٹیلہ )” اس کے چہرے پر مطمئن سی مسکراہٹ کھیل رہی تھی جبکہ اس کے تینوں دوست اس سے سخت ناراض تھے ، وہ  سوچ رہا تھا کوئی بات نہیں میں جلد ہی انھیں منا لوں گا ——–انہی دنوں میسو پوٹونیا میں بھی کھدائی کے دوران کسی کشتی کے آثار ملے جس میں بالکل ویسے ہی کھلونے ، مٹی کے نقشین برتن اور کانسی کی مہریں دریافت ہوئیں جیسی موئن جو دڑو —- نہیں جیئر ن جو دڑو سے ملی تھیں —— _______________ کہانی ابھی ختم نہیں ہوئی ہزاروں برس سے دبی مٹی کی دبیز تہوں کے نیچے ان گنت کتنی کہانیاں پوشیدہ ہو نگی کون جانے کب کس کی رسائی ان تک ہو جائے اور میں یا کوئی اور اپنے قاری تک پہنچا دے.

Leave a Reply

Leave A Reply

%d bloggers like this: