اپنی مرضی کا دن: سحرش عثمان

0
  • 29
    Shares

آؤ دوست چلتے ھیں کسی دن منڈین میڈیاکر لائف کو ٹھوکر مار کر اپنی مرضی کا دن گزارتے ھیں۔۔۔۔

فرصت کے اس دن میں سیپووں سے موتی چنیں گے۔۔۔۔ساحل کی نمی والی دھوپ میں پہروں چلا کریں گے۔۔۔۔
چلو نا کسی دن چپوؤں والی کشتی پر دریا پار کرتے ھیں اور دریا کے وسط میں کشتی روک کے دھڑکن کی تال پر سانسوں کے بجتے ھوئے اک تارے کی دھن سنتے ھیں۔۔۔۔۔چلو ایک دن رنگ نسل جنس سے اوپر اٹھ کے گزارتے ھیں۔۔
کسی پہاڑی کی چوٹی پر نکلتے ھوئے سورج کو یہ جتاتے ھیں که میاں ھم بھی کسی سے کم نھیں۔۔۔۔
آؤ۔۔۔۔۔کسی رات چاند کو چاندنی سے فلرٹ کرتا ھوا دیکھتے ھیں۔۔۔۔میں جان بوجھ کے تمھارے مگ میں کافی زیاده ڈال دوں گی تاکہ تم غلام علی کی غزلیں سنتے ھوئے سو مت جاؤ۔۔۔۔

آؤ کسی دن پھاڑی چشمے میں پاؤں ڈالے رگوں میں اترتی ھوئی ٹھنڈ محسوس کرتے ھیں۔۔۔۔۔
تم چلو تو کسی صحرا کی ریت چھانتے ھیں۔۔۔۔ کسی دشت میں مجنوں کے ھونے کے نشان کھوجتے ھیں۔۔۔۔۔تم آؤ تو کسی دن چائے کے مگ ھاتھوں میں لیے پھروں سٹڈی میں بیٹھتے ھیں۔

تم اپنی سوچ کی دھنک لے آنا میں اپنے خیال کا سورج لاؤں گی۔۔۔۔ پھر کسی نظم پر کسی شاعر پر کسی منطق پر کسی فلسفے پر گھنٹوں لا یعنی بحث کرتے ھیں۔۔۔۔تم اپنا نکتہ مت چھوڑنا۔۔۔۔ میں اپنی منوانے کا عزم لیے رکھوں گی۔۔۔۔۔ آؤ وه جو کونے میں دھرا گملہ ھے اس میں اگنے والی پہلی کونپل کا نام رکھتے ھیں اسے کلی،کلی سے پھول بنتا ھوئے دیکھتے ھیں۔۔۔۔۔ کسی دن لان کی پلاسٹک کی کرسیوں پہ بیٹھے گل دوپھر کو کھلتے جوبن پہ آتے مرجھاتے اور بند ھوتے ھوئے دیکھتے ھیں۔۔۔۔۔ پھر اس کی مختصر زندگی پر بلا وجہ اداس ھوتے ھیں۔۔۔۔ اداسی زائل کرنے واک پر چلتے ھیں۔۔۔۔ آؤ نومبر کی گلابی شاموں میں سردی کی آھٹ سننے چھت پر چلتے ھیں۔۔۔۔ تم آؤ تو کسی دن اس روزمره گزرتی ھوئی زندگی میں سے ایک دن نو سے پانچ جیتے ھیں۔۔۔۔

یہ منڈین لائف ھے اسے ٹھوکر پر رکھتے ھیں ھیں کیوں کہ یہ مجھ سے مجھے اور تم سے تمھیں چھین رھی ھے دوست!
تمھیں پتا ھے یہ روٹین میری تمھارے اندر موجزن پانیوں پر کائی بن کر جمی ھے۔۔۔۔۔ آؤ کسی دن اس روٹین کے اس تالاب میں آوارگی کا کنکر اتنے زور سے مارتے ھیں کہ کنکر بھنور در بھنور بناتا کائی کو تحلیل کر دے اور ھمارے اندر موجزن زندگی چلنے لگے۔۔۔۔۔

Leave a Reply

Leave A Reply

%d bloggers like this: