ساجدہ! زندگی کو ایک خوبصورت دن عطا کرنے کا شکریہ — صدف مرزا

0
  • 125
    Shares

دوست دارم که دوست عیب مرا
هم چو آیینه پیش رو گوید
نه که چون شانه با هزار زبان
پشت سر رفته مو به مو گوید

رفاقتوں کے یہ سلسلے یا صداقتوں کے یہ مرحلے۔۔۔
جب ڈاکٹر ساجدہ نواسی صاحبہ کو ملنے آئیں۔۔۔
جولائی کی ایک بے مزہ دوپہر کو ڈاکٹر صاحبہ کا فون آیا۔۔۔
کدھر ہو۔۔۔۔۔۔۔ ؟
کہاں جاوں گی۔۔۔۔ یہیں ہوں۔۔۔طبیعت ٹھیک نہیں۔۔۔ میں نے فورا مریض بن کر دکھایا۔۔۔ جو حسب معمول سنی ان سنی رہی۔۔۔
گھر؟
ہاں۔۔۔۔۔
کیا کر رہی ہیں۔۔۔۔؟
باغیچے میں درختوں پر خوب سیب لگے ہیں وہ گن رہی ہوں۔۔۔۔ میں نے جل کر کہا۔۔۔۔
آپ کہاں ہیں۔۔۔۔۔۔
کوپن ہیگن۔۔۔۔۔۔۔ بڑے آرام سے بولیں۔۔۔۔
ہائیں۔۔۔۔۔ میری ساری کوفت اور بیزاری دور ہو گئی۔۔۔
جہاں بھی ہیں فورا حاضر ہو جائیں۔۔۔۔

ساجدہ کی محبت ڈاکو یار کی سی ہے۔۔۔
وائے صدقے جاوں میں اپنے ڈاکو یار کے
جس نے ڈولی میں بٹھایا مجھ کو ٹھڈے مار کے۔
بس ایک دفعہ ہی سر دردد
سر درد کی شکایت کی تو پیشہ ورانہ مستعدی سے بولیں۔۔۔۔
میں تو ٹانگ ہی کاٹ سکتی ہوں۔۔۔۔۔
نیا گھٹنہ ڈال دوں ؟؟؟؟
اس سے پہلے کہ ڈاکو یار کے ٹھڈے گھٹنے پر پڑتے میں نے صوفے پر سے زقند لگائی۔۔۔۔
جلدی سے رات کے کپڑے بدل کر بقول میری صاحبزادی کے بے ڈھنگے کپڑے پہن لیے۔۔۔۔۔
نہ فٹنگ ۔۔ نہ استری۔۔۔

ساجدہ آئیں۔۔۔۔ ساتھ ہماری لاڈلی ماہین تھیں۔۔۔۔
گویا دو آتشہ۔۔۔۔ ماہین ماں کے حب الوطنی کے جنون میں شریک ہے اور ڈنمارک چھوڑ کر پاکستان جا بسی ہے۔۔۔۔ وہیں میڈیکل کی تعلیم حاصل کر رہی ہے۔۔۔۔
ماں کی طرح سادہ۔۔۔۔ منکسر المزاج۔۔۔
ہم دونوں ۔۔۔ دن رات کی طرح ایک دوسرے کے تعاقب میں رہتے ہیں۔۔۔۔
دونوں
اپنے اپنے مقام پر ۔۔۔ کبھی تم نہیں ۔۔۔۔۔ کبھی ہم نہیں۔۔۔
ابن انشا نے ہمارے لیے ہی کہا تھا
ہم سانجھ سمے کی چھایا ہیں تم چڑھتی رات کے چندرماں
ہم جاتے ہیں تم آتے ہو۔۔ پھر میل کی صورت کیونکر ہو۔۔
آئمہ نے ہماری انگلی پکڑ کر دروازہ کھولا۔۔۔۔۔
اور کمان سے چھوٹے تیر کی طرح ماہین کو لپٹ گئی۔۔۔۔
ہم دونوں ۔۔ نانیاں۔۔۔ ایک دوسرے کو دیکھتی رہیں۔۔۔۔
ساجدہ ہاتھ بڑھاتیں۔۔۔۔ پھر بڑے شوق سے ۔۔۔۔”
پچ پچ پچ۔۔۔۔۔ آ جائیں۔۔۔۔ شاباش۔۔۔ نانو پاس۔۔۔ پچ پچ پچ۔۔۔
جواب میں زور زور سے نفی میں سر ہلاتی۔۔۔
نہیں۔۔۔ نہیں۔۔۔
نانی کی طرح بس نئیں نئیں کر
ساجدہ جل کر بولیں۔۔۔

پھر ماہین کی انگلی پکڑ کر اسے باغیچے میں لے گئی۔۔۔
میں حیران اس کی ادائیں دیکھتی رہی۔۔۔۔
کیا محبت بھی ورثے میں ملتی ہے۔۔۔۔۔ کہیں خلیات کی بنت میں شامل ہے۔۔۔۔ شاید خون میں دوڑتی ہے۔۔۔

اس کی ماں بالکل اسی عمر کی تھی۔۔۔ جب میں ساجدہ کو پہلی دفعہ ملی۔۔۔۔
یہ اتنا وقت کہاں سے بچ بچا کر گزر گیا کہ آہٹ تک نہیں آئی۔۔۔۔
جیسے کسی نے جادو کی چھڑی گھمائی ہو۔۔۔۔
نظر بچا کر ماہ و سال گزر گئے
ابھی کل ہی کی تو بات ہے۔۔۔۔۔۔
عالیہ نے میڈیکل کالج شروع کیا۔۔۔۔۔
پہلی دفعہ ساجدہ کو لیکچر دیتے سنا۔۔۔۔۔

گھر آئی تو گھگھی بندھی ہوئی تھی۔۔۔
امی ساجدہ خالہ تو شدید لائق ہیں۔۔۔۔۔ پورے ہال پر سکوت طاری تھا۔۔۔۔
یہ صوفے پر لیٹ کر۔۔۔ چائے ئے ئے ئے۔۔۔۔ کی صدا دینے والی خالہ تو نہیں تھیں۔۔۔۔۔
چاکلیٹ ککیز۔۔۔ بیک کر لفافہ بھر کر دینے والی خالہ۔۔۔۔
امی۔۔۔۔ عزت اسی میں ہے کہ میں سنجیدگی سے پڑھائی شروع کر دوں۔۔۔۔ اس نے جیسے ڈر کر کہا۔۔۔۔
مجھے ہنسی آ گئی۔۔۔۔
ظاہر ہے کچھ کر کے دکھائیں گی تو بات بنے گی۔۔۔۔۔۔
حالانکہ اس کا تعلیمی ریکارڈ بہت اچھا رہا۔۔۔۔
اپنی آرتھو ڈوکس اماں کی طرح میں بھی اولاد کو رگ جاں سے عزیز ضرور رکھتی ہوں لیکن بے جا ستائش اور مدح سرائی کبھی نہیں کی ۔۔۔۔
وہ تو میرا گولڈ میڈل لینے گئیں تو واپس آ کر بولیں۔۔۔۔
کسی مان میں نہ رہنا
انڈا تو ابالنا نہیں آتا تمہیں۔۔۔۔ نری ٹر ٹر”
اماں کے ڈر کے مارے مدتوں ٹرانا چھوڑے رکھا۔۔۔۔۔۔
ساجدہ کو اللہ نے جوں جوں مرتبے سے نوازا۔۔۔ وہ ثمردار شاخ کی طرح جھکتی گئیں۔۔۔۔۔
آرتھو پیڈرک سرجن۔۔۔۔۔ جس کے ہاتھ کی شفا ۔۔۔۔ دست عیسی کی سی یے۔۔۔
کلب فیٹ۔۔۔۔ کا مرض۔۔۔ ہاتھ سے بچوں کی ایڑی گھما کر علاج کر دیتی ہیں۔۔۔۔
نجانے کتنے مریضوں کے گھٹنے میں ٹنٹناتی سٹیل کی ڈبیاں ڈال کر ان کو بھاگنے کا حکم دیتی ہیں۔۔۔۔
قم باذن اللہ۔۔۔۔
پاکستان کے زلزلے اور سیلاب میں بے شمار ڈینش ڈاکٹرز کو مہمیز کرنے والی دھان پان سی ڈاکٹر ساجدہ۔۔۔
کوپن ہیگن میں آپریشن کرتے ہوئے اگر کوئی کیل قبضہ ۔۔ پیچ۔۔۔ مرضی کا نہ ملے تو ہیلی کاپٹر سے ہمسایہ ملک سے طلب کرنے والی کاملیت پسند ڈاکٹر۔۔۔۔۔
جب سوات میں مریضوں کی سرجری کر رہی تھیں۔۔۔۔ جب مطلوبہ پیچ مانگا تو ان کے سامنے کیلوں۔۔۔ پیچوں۔۔۔ کا بڑا سا گول ڈبہ کر دیا گیا۔۔۔۔
ڈھونڈ لو بی بی۔۔۔۔
بے غرض۔۔۔۔ بے طلب عورتوں کی مدد کرنے کو ہمہ وقت تیار۔۔۔۔۔۔
میرے کتنے ہی افسانوں کا موضوع ۔۔ ساجدہ سے سنی حقیقی کہانیاں ہیں۔۔۔۔۔۔
حقیقت جو فسانے سے زیادہ سنگین ہوتی ہے۔۔۔۔۔
اسی حقیقت کو اپنی چھوٹی انگلی تھمائے اپنی مرضی کے راستے پر چلنے والی آہنی خاتون۔۔۔۔۔

ڈنمارک کی ۔۔۔ پرسنیلٹی آف دا ائر” کا ایوارڈ حاصل کرنے والی ڈاکٹر ساجدہ کے بیٹے ڈاکٹرماجد کو کوئین مارگریٹ نے ریسرچ پر تمغہ دیا۔۔۔۔
ان کی بیٹی شائستہ بہترین قانون دان ہے۔۔۔
میں نے ساجدہ سے کہا۔۔۔۔ ذرا نواسی کے سر پر ہاتھ پھیریں۔۔۔۔ کچھ آپ کا اثر لے۔۔۔۔۔
الہی رحم۔۔۔۔۔۔ میرے فرزند ارجمند نے تبصرہ کیا ۔۔۔۔

ہم نے طے کیا کہ لنچ ترکی ریسٹورنٹ میں کرتے ہیں۔۔۔
میری گاڑی میں بےبی چئر نہیں تھی۔
۔۔پولیس نے دیکھ لیا تو جرمانہ ہو جائے گا ۔۔۔۔
میں نے ڈرایا۔۔۔۔ پولیس اور حکومت کا موقف ہے کہ قوم کا سرمایہ اور مستقبل بغیر سیٹ بیلٹ کے کیوں لیے جاتے ہیں۔۔۔۔۔
یہاں تو ماں باپ بچے کی درست دیکھ بھال نہ کریں تو حکومت بچے چھین لیتی ہے۔۔۔۔

ساجدہ بولیں اوپر شال دے کر چھپا لیں۔۔۔۔
میں نے بردہ فروشوں کی طرح اسے چادر کے نیچے چھپایا۔۔۔۔۔

کونج کی طرح کی وہ پتلی سی ننھی سی
گردن نکال کر ۔۔۔ ننا۔۔۔ ننا ۔۔ کرتی رہی۔۔۔
اور میں
چا ا ا آ آ کر کے بہلاتی رہی

عالیہ کو فون کیا۔۔۔۔۔ وہ ہسپتال سے بھاگی آئی۔۔۔۔
آئمہ نے ماں کے پاس جانے سے صاف انکار کردیا۔۔۔۔
نائے۔۔۔ نائے۔۔۔
اور ماہین کے گرد ننھے ننھے بازو لپیٹ دئیے ۔۔۔
چلو جی۔۔۔۔ ساجدہ بولیں۔۔۔
ان کے ہاتھ ایک معصومانہ رعونت سے پہلے ہی جھٹکے جا چکے تھے۔۔۔۔۔
ہنستے کھیلتے واپس جاتے ہوئے۔۔۔۔یونہی خیال آیا۔۔۔۔
صادق دوست زندگی کا سرمایہ ہوتے ہیں۔۔۔
زندگی کو ایک خوبصورت دن عطا کرنے کا شکریہ۔۔۔

Leave a Reply

Leave A Reply

%d bloggers like this: